حماس کے زیر حراست 136 قیدیوں سے زیادہ تر اسرائیلی فوجی ہیں: رپورٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

خبر رساں ادارے ’اے ایف پی‘ کی طرف سے نشر ہونے والی ایک رپورٹ کے مطابق گذشتہ ہفتے حماس نے جنگ بندی کے معاہدے کے تحت 80 اسرائیلی خواتین، بچوں اور نوعمروں کو اسرائیلی جیلوں میں قید فلسطینی قیدیوں کی رہائی کے بدلے رہا کیا تھا۔ کہا گیا تھا کہ ان میں حماس کے علاوہ دیگر دھڑوں نے 25اسرائیلی یرغمالیوں کو رہا کیا تھا۔ ان میں سے زیادہ تر تھائی فارم ورکرز تھے جنہیں 7 اکتوبر کو حماس کے غزہ کے اطراف میں اسرائیلی بستیوں پر حملوں کے دوران یرغمالی بنا لیا گیا تھا۔

یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ حماس نے پہلی جنگ بندی سے قبل 5 افراد کو رہا کیا تھا اس لیے زندہ اپنے گھروں کو لوٹنے والوں کی کل تعداد 110 ہے، جن میں 33 بچے، 49 خواتین اور 28 مرد شامل ہیں۔ جنگ بندی سے قبل اسرائیل کی جانب سے کہا جاتا رہا ہے کہ اس کے فوجیوں اور عام شہریوں سمیت کل 240 اسرائیل غزہ میں حماس اور دوسرے دھڑوں کی قید میں ہیں۔ اسرائیل نے تصدیق کی ہے کہ اس کے پانچ قیدی غزہ میں لڑائی کے دوران قید میں ہیں۔ جب کہ 136 قیدی بدستور موجود ہیں جن میں 125 اسرائیلی، 8 تھائی، ایک نیپالی ہیں۔ ، ایک تنزانی ، ایک فرانسیسی میکسیکن شامل ہے۔

حماس نے تصدیق کی تھی کہ اس کے ہاں کم عمر یرغمال بچہ کفیر بیباس تھا جو 10 ماہ کی عمر میں غزہ پر اسرائیلی فضائی حملے میں اپنے 4 سالہ بھائی اور والدہ شیری بیباس سمیت مارا گیا تھا۔ حکومت نے کل جمعہ کو تصدیق کی کہ اسرائیلی فوج نے دو مغویوں کو ہلاک کر دیا جن کی شناخت نوا مارسیانو 19 سالہ ایک فوجی اور ایک سالہ خاتون کے طور پر کی گئی ہے۔

ایجنسی ’اے ایف پی‘ نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ غزہ میں بیباس اور اس کے چھوٹے بھائی کے علاوہ کوئی بھی زیر حراست بچہ موجود نہیں ہیں، جب کہ 17 خواتین اب بھی غزہ کی پٹی میں یرغمال جن میں سب سے بڑی اوفرا کیدار جوڈتھ ہیں اور وائن اسٹائن ہاگئی شامل ہیں جن کی عمریں 70 سال کے درمیان ہیں۔

پانچ یرغمالی خواتین کو جب اغوا کیا گیا تو ان کی عمر 18 سے 19 سال کے درمیان تھی اور وہ لازمی اپنی فوجی خدمات انجام دے رہی تھیں۔ فوجی ہونے کی وجہ سے انہیں قیدیوں کے تبادلے کے معاہدے سے خارج کر دیا گیا۔ کم از کم 91 افراد ابھی بھی زیر حراست ہیں جن میں سے 10 کی عمریں 18 سے 22 سال کے درمیان ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں