جنگ کی وجہ سے غزہ میں بچے غذائی قلت کا شکار، والدین بچوں کو بھوکا مرتا دیکھنے پرمجبور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

غزہ کے بے گھر افراد رفح کے ایک اسکول کے صحن میں پناہ گزین ہیں۔ انہیں نہ تو کھانا میسر ہے اورنہ ہی پانی دستیاب ہے۔ وہ تکلیف میں دن بھرجاگتے ہیں اور بھوکے سوتے ہیں۔

غزہ میں جنگ کی وجہ سے تباہ حال شہری آبادی کو جان کے لالے پڑ چکے ہیں۔ والدین اپنے بچوں کو بھوک سے مرتا دیکھنے پر مجبور ہیں۔

بیشتر مقامات پر غزہ میں بچوں کو دن میں ایک وقت کا کھانا بھی میسر نہیں۔ وہ دودھ کی جگہ پانی سے گذارہ کرتے ہیں۔

اسرائیل اور حماس کے درمیان دو ماہ سے جاری جنگ کے دوران خوراک کی قلت ایک بڑا مسئلہ بنی ہوئی ہے لیکن یکم دسمبر کو ایک ہفتہ طویل جنگ بندی کے خاتمے کے بعد مصر سے امدادی ٹرکوں کی داخلے کی تعداد میں کمی اور شدید لڑائی کی وجہ سے یہ مسئلہ مزید بڑھ گیا ہے۔

دودھ کے بجائے پانی

بے گھر افراد میں سے ایک زکریا ریحان ایک عارضی کیمپ میں اپنے خاندان کے خیمے کے سامنے چٹائی پر بیٹھا ہے۔اس نے اپنے چھوٹے بچے یزن اور ایک د ودھ کی بوتل اٹھا رکھی ہے جس میں تھوڑی مقدار میں مائع ہے۔

زکریا کا کہنا ہے کہ "یہ بنیادی طور پر پانی ہے جس میں ایک چمچ پاؤڈر دودھ ہے۔ شاید ایک چمچ سے بھی کم یا ایسی کوئی اور چیزجس کی خوشبو دودھ کی طرح آتی ہے۔ اس لیے میں اسے دھوکہ دے سکتا ہوں کہ یہ دودھ ہے تاکہ وہ اسے پی لے، لیکن یہ صحت مند نہیں ہے، ایسا نہیں ہے۔ اسے کوئی غذائیت ہو"۔

زکریا ریحان نے مزید کہا کہ کیمپ میں موجود تمام خاندان روزانہ کھانا اور اسے پکانے کا طریقہ تلاش کرنے کے لیے جدوجہد کرتے ہیں۔ اس نے کہا کہ اس نے ایک ڈبے سے کچی پھلیاں کھائیں جو امدادی کھیپ کے حصے کے طور پر آئی تھی کیونکہ آگ جلانے کے لیے کوئی ایندھن نہیں تھا۔

ایک سوال کے جواب میں اس نے وضاحت کی کہ "ہاں امداد آتی ہے، لیکن یہ بالکل بھی کافی نہیں ہے۔ یہ تمام خاندانوں یا خاندان کے افراد کے لیے کافی نہیں۔ آپ دس افراد کے لیے پھلیوں کا ایک ڈبہ یا گوشت کا ایک ڈبہ لے سکتے ہیں۔ مگر وہ ایک شخص کے پیٹ کے لیے بھی ناکافی ہے۔

غزہ کی موجودہ صورتحال

دن میں ایک کھانا

رفح کے ایک اسکول میں لگائے گئے کیمپ کے ایک اور خیمے میں تین بچے ایک پیالے سے چاول کھا رہے تھے۔ ان کی والدہ اسرا الدیب نے کہا کہ وہ باقی دن کچھ نہیں کھائیں گے۔

اس نے غصے اور تھکے ہوئے لہجے میں مزید کہا کہ "بچے بھوکے سوتے ہیں اور بھوکے جاگتے ہیں۔ میں نے ان کے لیے کھانا تیار کیا۔ یہ وہ واحد کھانا ہے جو وہ دن میں کھاتے ہیں اور وہ باقی دن نہیں کھاتے۔ "

اس نے کہا کہ "گھر میں انہیں غذائیت سے بھرپور کھانا کھلاتی تھی۔ وہ کبھی بیمار نہیں ہوئے، لیکن یہاں، وہ ہمیشہ بیمار رہتے ہیں۔ ہر روز ان کے پیٹ میں ٹھنڈ پڑ جاتی ہے"۔

خوراک اور پانی کی کمی

کیمپ کے ایک اور رہائشی ناجی شلح نے کچھ ٹماٹر اور ہری مرچیں کاٹیں اور انہیں ایک چھوٹے کڑاہی میں پکانے کی تیار کیا۔ اس نے کہا کہ یہ دن میں ان کے بچوں کا واحد کھانا ہوگا۔

ناجی نے مزید کہا کہ ’’اگر میں اپنے بچوں کے لیے روٹی ڈھونڈ سکتا ہوں تو یہ ایک پونڈ سونا حاصل کرنے کے مترادف ہوگا‘‘۔ ناجی نے مزید کہا کہ وہ خوراک اور پانی کی کمی کی وجہ سے پانی کی کمی کا شکار ہیں اور ان کے ایک بچے کا وزن بہت کم ہوگیا ہے۔ .

اس نے کہا کہ اگر مجھے روٹی مل جائے تو میں اپنے بچے کو صرف آدھی روٹی ہی دے سکتا ہوں کیونکہ اگر وہ پوری روٹی کھا لے گا تو اگلے دن نہیں کھائے گا۔

اقوام متحدہ کے دفتر برائے انسانی امور نے جمعرات کو کہا کہ مصر کی سرحد پر جنوبی غزہ کی پٹی میں واقع رفح پوری فلسطینی پٹی کا واحد علاقہ ہے جسے گزشتہ چار دنوں کے دوران محدود امداد ملی ہے۔

لیکن ابھی تک یہ بھی ناکافی ہے۔ والدین نے کہا کہ ان کے بچے بیمار ہو رہے ہیں اور وزن کم ہو رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں