گولان چوٹیوں پر گولہ باری کے جواب میں اسرائیل کی دمشق اور قنیطرہ میں بمباری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل نے شام کی طرف سے گولان پرگولہ باری کے جواب میں دمشق کے جنوب مغربی دیہی علاقوں میں آٹھ میزائل لانچنگ سائٹس اور قنیطرہ کے قصبے حضر کے مشرق میں شامی فوج کے ایک فوجی ٹھکانے پر بمباری کی۔

سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس کے مطابق یہ حملے گولان پہاڑیوں میں 3 میزائلوں کی وجہ سے ہونے والے دھماکوں کی آواز کے بعد کیے گئے۔ ان میں سے ایک میزائل حملہ لبنانی حزب اللہ کے ساتھ کام کرنے والے دھڑوں کی طرف سے کیا گیا تھا۔

دوسری جانب قنیطرہ اور درعا گورنریوں میں شامی گولان کے قریب تعینات شامی فوج اور ملیشیا کے فوجی مقامات پر ہائی الرٹ کیا گیا ہے۔

گولان پر راکٹ باری

قابل ذکر ہے کہ گولان میں منگل کے روز دھماکے ہوئے جو شام کی سرزمین سے داغے گئے میزائلوں کی وجہ سے تھے۔ اس کے چند گھنٹے بعد اسرائیلی فوج نے دمشق کے دیہی علاقےمغربی قلمون میں الجراجیر گاؤں کے قریب لبنانی حزب اللہ سے تعلق رکھنے والے ایک مقام کو نشانہ بنایا۔ یہ علاقہ شام اور لبنان کی سرحد کے قریب واقع ہے۔

سنہ 1201ء میں شام میں خانہ جنگی شروع ہونے کے بعد اسرائیل نے شام میں

سینکڑوں فضائی حملے شروع کیے ہیں، جن میں شامی فوج اور لبنانی حزب اللہ سمیت دیگر ملیشیا کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا جاتا رہا ہے۔

حماس کی جانب سے 7 اکتوبر کو اسرائیل پر غیر معمولی حملہ کرنے کے بعد سے اسرائیل نے شامی علاقے کو نشانہ بنانے میں اضافہ کر دیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں