غزہ میں فوجی کارروائیاں تیز کردی گئی ہیں: اسرائیلی عہدیدار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل کے ایک اعلیٰ فوجی اہلکار نے انکشاف کیا ہے کہ اسرائیل کو توقع ہے کہ فوج جنوبی غزہ کی پٹی کے شہر خان یونس میں تین سے چار ہفتوں میں اپنا فوجی آپریشن ختم کر دے گی۔

ایکسیس نیوز سائٹ کے مطابق اسرائیلی اہلکار نے کہا کہ "جنگ کا زیادہ شدت والا مرحلہ مزید تین سے چار ہفتوں تک جاری رہنے کا امکان ہے"۔

خان یونس میں آپریشن ابھی شروع ہوا ہے

ایک سینیر اسرائیلی اہلکار نے کہا کہ فوج نے غزہ کی پٹی کے شمالی حصے میں "اہم پیش رفت" کی ہے، لیکن جنوبی پٹی میں خان یونس میں آپریشن، جہاں اسرائیل کا خیال ہے کہ حماس کی کمانڈ سینٹر قیادت قائم ہے"میں آپریشن ابھی ابھی شروع ہوا ہے"۔

انہوں نے مزید کہا کہ امریکا اسرائیل کو "نکیل نہیں" ڈال کر رہا اور نہ ہی اسے آپریشن روکنے کے لیے کوئی مخصوص ڈیڈ لائن دے رہا ہے۔

ٹائم ٹیبل پر اختلاف

اہلکار کا کہنا تھا کہ صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ اور اسرائیلی حکومت کے درمیان تنازعہ کا تعلق اسرائیل کی طرف سے غزہ جنگ کے مشکل ترین مرحلے کو ختم کرنے کے لیے مقرر کردہ ٹائم ٹیبل سے ہے۔

اسرائیلی فوجی اہلکار نےواضح کیا کہ اگر اسرائیل دسمبر کے آخر تک آپریشن کا انتہائی شدید مرحلہ مکمل کر لیتا ہے تو امریکہ مطمئن ہو گا جبکہ اسرائیل جنوری کے آخر کو سامنے رکھ کر آپریشن کر رہا ہے۔

وسیع زمینی حملہ

غزہ سٹی، خان یونس، دیر البلح اور نصیرات میں جمعہ کو بھی جھڑپیں جاری رہیں جن میں اسرائیلی فوج کی زمینی کارروائیوں اور فضائی اور بحری بمباری بھی شامل ہے۔

گذشتہ ہفتے کے دوران اسرائیلی افواج نے جنوبی غزہ پر اپنے زمینی حملے کا دائرہ بڑھاتے ہوئےپٹی کے دوسرے بڑے شہر خان یونس پر توجہ مرکوز کی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں