فلسطین اسرائیل تنازع

غزہ میں اندھا دھند بمباری میں مرنے والے 60 فی صد لوگ عام شہری ہیں: اسرائیلی رپورٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ایک اسرائیلی تحقیق میں غزہ میں شہریوں کی ہلاکتوں کو "غیرمعمولی" قرار دیا گیا ہے۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ غزہ میں اندھا دھند بمباری سے 61 فیصد اموات عام شہریوں کی ہیں۔ یہ تناسب دنیا بھر میں ہونے والے تمام تنازعات میں ہونے والی ہلاکتوں کی اوسط سے شرح سے کہیں زیادہ ہے۔

سماجیات کے پروفیسر یگل لیوی کی طرف سے کی گئی اس تحقیق میں انکشاف کیا گیا ہے کہ اسرائیل کی جانب سے 2012 سے 2022 کے عرصے کے دوران کیے جانے والے پچھلے حملوں میں شہریوں کی ہلاکتوں کی شرح 40 فیصد سے زیادہ نہیں تھی۔ موجودہ سال کے شروع میں ہونے والی بمباری کی مہمات کے دوران کم ہو کر 33 فیصد رہ گئی تھی۔

اخبار "ہارٹز" کی طرف سے شائع ہونے والی اسرائیلی تحقیق میں اشارہ دیا گیا ہے کہ غزہ کی پٹی پر اسرائیل کی جانب سے شروع کی گئی فضائی بمباری کی مہم حالیہ برسوں میں شہریوں کی ہلاکتوں کے لحاظ سے سب سے زیادہ مہلک اور خطرناک ہے"۔

محقق اس نتیجے پر پہنچے کہ بڑے پیمانے پر شہریوں کا قتل اسرائیل کی سلامتی میں مدد نہیں کرسکتا بلکہ اس کی بنیادیں اسے کمزور کرتی ہیں۔

انہوں نے عندیہ دیا کہ شہری ہلاکتوں میں اضافہ امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ کے لیے کام کو مزید مشکل بنا دے گا، جس نے انسانی بنیادوں پر امداد شروع کرنے میں اہم کردار ادا کیا اور یرغمالیوں کو آزاد کرانے پر توجہ مرکوز کی، لیکن اسے اسرائیل اور اس کی حمایت پر عالمی تنقید کا سامنا ہے۔

غزہ میں جنگ بغیر کسی پیش رفت یا جنگ بندی کے تیسرے مہینے میں داخل ہو گئی ہے۔ آج اتوار کو اسرائیلی فوج نے جنوبی غزہ پر اپنی گرفت مضبوط کرنے کے لیے شدید بمباری جب کہ غزہ کے لاکھوں باشندے خود کو پرتشدد لڑائیوں سے بچانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

بین الاقوامی امدادی تنظیموں نے سلامتی کونسل میں جنگ بندی کے اقدام کی ناکامی پر سخت تنقید کی ہے۔ انہوں خبردار کیا ہے کہ ناکام بنائے گئے مسودہ قرارداد سے "شہریوں کو سانس لینے کا موقع ملتا مگر امریکا نے غزہ کے محصورین کے لیے سکون کا سانس لینے کا موقع ضائع کردیا‘‘۔

تنظیموں نے اپنے بیان میں کہا کہ "غزہ اب عام شہریوں کے لیے دنیا کی سب سے خطرناک جگہ ہے۔ اس میں کوئی محفوظ جگہ نہیں ہے۔" اقوام متحدہ کے ورلڈ فوڈ پروگرام کے ڈپٹی ڈائریکٹر کارل سکاؤ نے کہا ہے کہ " غزہ میں خوراک کی شدید قلت ہے۔ غزہ میں لوگ بھوک سے مر رہے ہیں"۔ انہوں نے کہا کہ ہزاروں مایوس اور بھوکے مارے لوگ امداد کی تقسیم کے مراکز میں جمع ہیں مگر انہیں امداد نہیں پہنچ رہی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں