الاحساء کےعالمی نمبر ون کھجوربرآمدکنندہ کا ریکارڈ برقرار رکھنا چاہتے ہیں:سعود بن طلال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے علاقے الاحساء کے گورنر شہزادہ سعود بن طلال بن بدر نے الاحساء کے کھجور برآمد کرنے میں دنیا میں پہلے نمبر پر رہنے کے ہدف کو برقرار رکھنے پر زور دیا ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے کل سوموار کو روز ریاض ایگزیبیشن اینڈ کنونشن سینٹر میں منعقدہ بین الاقوامی کھجور کانفرنس اور نمائش کے موقعے پر کیا۔ اس موقعے پر انہوں نے "الاحساء گورنری میں کھجور کے شعبے میں سرمایہ کاری کے امید افزا مواقع" کے عنوان سے ایک مکالمے کے سیشن میں شرکت کی۔ یہ میلہ 14 دسمبر تک جاری رہے گا۔

شہزادہ سعود بن طلال بن بدر نے اس سیشن کے دوران وضاحت کرتے ہوئے کھجور اوراس شعبے میں سرمایہ کاری کی اہمیت کے بارے میں بتایا۔ انہوں نے کہا کہ "ہمارا مقصد ہے کہ الاحساء کھجور کی برآمد میں دنیا میں پہلے نمبر پر رہے۔ یہ علاقہ کھجور کے شعبے میں مقامی اور علاقائی سطح پر کھجور پیدا کرنے والے سب سے بڑی گورنریوں میں سے ایک ہے۔مملکت کی قیادت بھی الاحساء میں کھجور کی کاشت کو بہتر بنانے میں دلچسپی لے رہی ہے۔

انہوں نے کھانے کی صنعتوں اور سرکلر اکانومی کے ذریعے کھجور کے شعبے سے مستفید ہونے والے معاشی تنوع کی طرف بھی اشارہ کیا اور کھجور کی ویلیو چین میں حصہ لینے والوں کو مزید ترقی اور پائیداری حاصل کرنے کے لیے فراہم کی جانے والی مراعات اور صلاحیتوں پر روشنی ڈالی۔

قابل ذکر ہے کہ سعودی عرب نے کھجور کے شعبے میں شاندار ترقی کی ہے۔ مملکت میں 36 ملین کھجور کے درخت ہیں۔ یہ دنیا میں کھجور کے سب سے بڑے برآمد کنندہ کے طور پر بھی پہلے نمبر پر ہے جہاں سالانہ تقریباً 1.6 ملین ٹن کھجور کاشت کی جاتی ہے جب کہ سعودی عرب کو سالانہ 1,280 ملین ریال کا زر مبادلہ حاصل ہوتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں