موسمیاتی تبدیلیوں کے لیے'سی او پی 28' کی حمایت کرتے ہیں: سعودی وزیر توانائی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے وزیر برائے توانائی شہزاداہ عبدالعزیز بن سلمان نے بدھ کے روز کہا ہے کہ مملکت 'سی او پی 28' معاہدے کی حمایت کرتی ہے۔ اس معاہدے کے ذریعے تمام ممالک توانائی کے ذرائع کے لیے خود فیصلہ کر سکیں گے۔

شہزادہ عبدالعزیز بن سلمان نے اس سلسلے میں دیے گئے ایک انٹرویو میں کہا ' یہ معاہدہ تیل برآمد کرنے والے ملکوں پر اثر نہیں ڈالے گا۔ '

انٹرویو میں ہائیڈروکاربن کو مرحلہ وار ختم کرنے کے لیے طے شدہ وقت کا حوالہ دیتے ہوئے شہزادہ عبدالعزیز بن سلمان نے کہا 'حکم دینے کا فرعونی طریقہ کار دفن ہوچکا ہے۔ لوگ انتخاب کرنے کے لیے آزاد ہیں۔'

اس موقع پر متحدہ عرب امارات کا شکریہ ادا کرتے ہوئے سعودی وزیر نے کہا کہ سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے درمیان تعاون اور ہم آہنگی موجود رہی ہے ، ہماری باہمی مشاورت بھی جاری رہی ہے اور انہوں نے کبھی ہمیں چھوڑا نہیں ہے۔ جس طرح ہمارا باہم تعاون رہا ہےکم ہی کانفرنسوں میں اس سے پہلے دیکھا گیا ہوگا۔

انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا گیا 'معاہدے میں یہ واضح کیا گیا ہے کہ تمام ممالک اپنے اپنے انداز میں اور قومی اقدار کے ساتھ چیزوں کو لے کر چلیں گے، کیونکہ ہر ملک کے حالات مختلف ہوتے ہیں اور ان حالات میں رہتے ہوئے ہی کوئی ملک چیلنجوں اور ذمہ داریوں سے عہدہ برآ ہوتا ہے۔'

سعودی وزیر توانائی کا کہنا تھا ' انہوں نے موسمیاتی تبدیلیوں کے سلسلے میں ہماری سوچ اور تفہیم سے اتفاق کیا اور جو ممالک فیصلہ سازی میں شریک نہیں ہیں انہیں قدغنوں کے تابع نہ کرنا اہم بات ہے۔'

اس موقع پر اوپیک کے سیکرٹری جنرل ھیثم الغایث گیس کی برآمد کرنے والے ملکوں کے ساتھ جاری کیے گئے اپنے مشترکہ بیان میں متحدہ عرب امارات کو مبارک باد دی کہ امارات میں اس بڑی کانفرنس کے کامیاب انعقاد کی صورت مثبت نتائج برآمد ہوئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں