فلسطین اسرائیل تنازع

یہودی آباد کاروں کی پر تشدد کارروائیاں، اسرائیل کو امریکی بندوقوں کی فروخت رک گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی جوبائیڈن انتظامیہ نے ایک مرتبہ پھر اسرائیل کو بندوقوں کی فراہمی کے لیے اجازت کا پراسس روک دیا ہے۔ اسرائیل امریکہ سے 20000 بندوقیں مغربی کنارے ، غزہ ، لبنانی سرحدی دیہات وغیرہ کے لیے مزید بندوقیں خریدنے کی کوشش میں تھا۔

لیکن امریکہ نے یہ بندوقیں یہودی آباد کاروں کو دے کر فلسطینیوں کے خلاف کارروائیوں کی منصوبہ بندی کی اطلاعات کے بعد روک دی ہیں۔ تاہم امریکی کی پالیسی میں کچھ تبدیلی کی بات کرنے والے اس سلسلے میں بے خبر ہیں کہ امریکہ بحرہ متوسط سے اپنے بحری بیڑے بھی بھی واپس بلانے کا کوئی فیصلہ کیا ہے نہیں۔ نیز یہ کہ بھاری مقدار میں ٹینکوں کے گولے اور دیگر اسلحے کے بارے میں کوئی مختلف فیصلہ تو نہیں کیا۔

امریکہ نے سلامتی کونسل میں جنگ بندی کی قرارداد کو ویٹو کر کے اسرائیل کی کھلی حمایت کا ایک بڑا سفارتی اقدام کیا ، بعد ازاں جنرل اسمبلی کی قرارداد میں بھی دنیا کے 193 ملکوں کے جنگ بندی کے حق میں ہوجانے کے باوجود کل آٹھ حامی ملکوں سمیت اسرائیل کے حق میں جنگ بندی کے خلاف کھڑا رہا ہے۔

لیکن مغربی کنارے میں یہودی آباد کاروں کی جانب سے بڑھتی ہوئی کارروائیوں کے خلاف امریکہ اور مغربی ملک کھل کر بات کرنے لگے ہیں ، وہ سمجھتے ہیں کہ جنگ مغربی کنارے تک پھیلنے سے روکنے کا فائدہ خود اسرائیل کو بھی ہوگا ۔ اگر جنگ غزہ سے نکل گئی تو اسرائیل کے لیے مشکلات بڑھ سکتے ہیں۔

خیال رہے اسرائیل نے امریکہ سے بیس ہزار یا اس سے زیادہ بندوقیں لینے کا مقصد ہی یہ بتایا تھا کہ یہ بندوقیں سویلین یہودیوں کی طرف سے دشمن کو فوری ریسپانس دینے کے لیے ضروری ہیں۔

تاہم جب امریکہ کو اس اس بات کا موجودہ حالات کے حوالے سے علم ہوا کہ اسرائیلی کابینہ میں شامل سب سے زیاہ انتہا پسند وزیر بین گویر کا یہ منصوبہ بھی معلوم ہوا کہ وہ یہ بندوقیں مغربی کنارے میں یہودی آبادکاروں میں تقسیم کرکے فلسطینیوں کو نشانہ بنانا چاہتا ہے۔

اس سلسلے میں امریکی انتظامیہ کے لیے بھی اس وقت مشکل پیدا ہو گئی جب بن گویر کے منصوبے سے متعلق سرکاری دستاویزات پریس کے ذریعے سامنے آگئیں۔

تاہم امریکی دفتر خارجہ کے ترجمان نے اس بارے میں تفصیلات دینے سے معذرت کرتے ہوئے کہا ہمیں دفاعی اور تجارتی معاہدوں کے بارے میں معلومات دینے سے منع کیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں