فلسطین اسرائیل تنازع

فلسطینی ایوان صدر کی جنین میں اسرائیلی فوج کے ہاتھوں مسجد کی بے حرمتی کی مذمت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فلسطینی ایوان صدر نے جمعرات کو اسرائیلی فوج کی طرف سے مقبوضہ مغربی کنارے کے شمالی شہر جنین میں ایک مسجد کی "بے حرمتی" کے واقعے کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔

خیال رہے کہ سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو وائرل ہو رہی ہے جس میں اسرائیلی فوجیوں کو ایک مسجد کے لاؤڈ اسپیکر کو استعمال کرتےہوئے گانے نشرکرتے سنا جا سکتا ہے۔

ایک ویڈیو کلپ میں دکھایا گیا ہے کہ شمالی مغربی کنارے کے جنین کیمپ میں ایک مسجد کے اندر فوجی یہودی مقدس مقام کی بے حرمتی کررہے ہیں۔

ویڈیو کلپ کے آخر میں قہقہوں کی آواز سنی جا سکتی ہے جب سپاہی مسجد سے نکلتے ہیں اور لاؤڈ اسپیکر سے یہودیوں کے تہوار کے لیے ایک گانا پیش کیا جاتا ہے۔

فلسطینی وزارت صحت نے جمعرات کو اعلان کیا کہ اسرائیلی فورسز نے مقبوضہ مغربی کنارے کے شمالی شہر جنین میں کئی دنوں سے جاری فوجی آپریشن کے دوران 11 افراد کو شہید کر دیا۔

اسرائیلی فوجیں منگل کی صبح شمالی مغربی کنارے کے شہر جنین اور شہر کے کیمپ میں داخل ہوئیں اور دوپہر تک اسرائیلی فوجی اندر موجود رہے۔

فلسطینی ایوان صدر کے ترجمان نبیل ابو ردینہ نے کہا کہ اسرائیلی قابض فوج کی جانب سے جنین کیمپ میں مسجد کی بے حرمتی شرمناک اور قابل مذمت رویہ ہے اور ہم خطے کو مذہبی جنگ میں گھسیٹنے کے خلاف خبردار کرتے ہیں۔

ابو ردینا نے خبردار کیا کہ "مذہبی جنگ کے شعلے جو اسرائیل بھڑکانا چاہتا ہے، وہ صرف ہمارے خطے تک محدود نہیں رہیں گے بلکہ پوری دنیا تک پھیل جائیں گے۔

اسرائیلی فوج نے اعلان کیا کہ جنین مسجد پر حملے میں ملوث فوجیوں کو تادیبی اقدامات کا سامنا کرنے کے لیے آپریشنل سرگرمیوں سے ہٹا دیا گیا ہے۔

فوج کے ترجمان ڈینیل ہاگری نے کہا کہ "جو لوگ ’ آئی ڈی ایف‘ کی اقدار کے مطابق کام نہیں کرتے ہیں ان کے خلاف اقدامات کیے جائیں گے"۔

اسرائیلی فوج ان مطلوب افراد کا تعاقب کرنے کے لیے جنین شہر اور اس کے کیمپ میں بار بار دراندازی کرتی ہے جن پر اس نے اسرائیلی اہداف پر حملوں کی منصوبہ بندی کا الزام لگایا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں