اسرائیلی فورسزکا مغربی کنارے کے شمالی شہر طوکرم پر دھاوا، جنین پر بمباری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فلسطین کے دریائے اردن کے مغربی کنارے کے شمالی شہر طولکرم پر اسرائیلی فوج نے دھاوا بول دیا جب کہ شمالی شہر جنین پر بمباری کی اططلاعات ہیں۔

فلسطینی خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق،اتوار کے روز طولکرم میں نور شمس کیمپ پر اسرائیلی فوج کے دھاوے کے دوران دو افراد شہید ہوگئے۔

خبر رساں ایجنسی نے بتایا کہ کیمپ میں گرفتاریوں اور انفراسٹرکچر کی تباہی کے مناظر اور واقعات سامنے آئے ہیں۔

ڈرونز

اس دوران اسرائیلی فوج کے ڈرونز کی بمباری میں متعدد افراد زخمی ہوگئے۔

یہ پیش رفت اس وقت سامنے آئی جب اسرائیلی فوج نے مغربی جانب سے طولکرم شہر پر حملہ کیا۔ قابض فجو نے نور شمس کیمپ کا سخت محاصرہ کیا اور وہاں پر موجود فلسطینیوں کے ساتھ جھڑپیں ہوئیں۔

درایں اثناء جنین میں مسلسل تصادم اور فضائی بمباری کا سلسلہ جاری ہے۔ آج صبح جنین شہر پر اسرائیلی فوج کی ڈرون کے ذریعے کی گئی فائرنگ سے موت واقع ہوگئی تھی۔

اسرائیلی فوج نے 12 دسمبر کو جنین شہر اور اس کے کیمپ پر حملہ کیا تھا جس میں 11 افراد جاں بحق اور سیکڑوں کو گرفتار کیا گیا تھا۔

مغربی کنارے سے
مغربی کنارے سے

مہلک ترین

قابل ذکر ہے کہ اقوام متحدہ نے اپنی تازہ ترین رپورٹ میں اس سال (2023) کو مغربی کنارے میں فلسطینیوں کے لیے 2005 کے بعد سب سے خونریز قرار دیا ہے۔

اقوام متحدہ کے دفتر برائے رابطہ برائے انسانی امور (OCHA) کے مطابق یکم جنوری سے 15 دسمبر کے درمیان مغربی کنارے اور مشرقی یروشلم میں 477 فلسطینی مارے گئے، جن میں سے نصف سے زیادہ 7 اکتوبر سے جنگ شروع ہونے والی لڑائی کے بعد مارے گئے۔

اقوام متحدہ کےدفتر سے گذشتہ جمعہ کو جاری کردہ رپورٹ کے مطابق جب کہ اکتوبر کے بعد سے مغربی کنارے میں دو تہائی ہلاکتیں اسرائیلی فورسز کی جانب سے کی جانے والی "تلاش اور گرفتاری" کی کارروائیوں اور دیگر کارروائیوں کے دوران ہوئیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں