غرب اردن میں اسرائیلی خاتون فوجی اہلکار گاڑی تلے روندے جانے سے زخمی

حملہ آور کو گولی مار کر قتل کردیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ کی پٹی میں شدید لڑائیوں کے تسلسل کے ساتھ مغربی کنارے میں کشیدگی کی رفتار میں اضافہ ہو رہا ہے۔

اسرائیلی میڈیا نے آج جمعہ کو بتایا کہ مغربی کنارے میں واضح طور پر اور سوچے سمجھے منصوبے کے تحت ایک فلسطینی نے اپنی گاڑی ایک اسرائیلی خاتون اہلکار پر چڑھائی جس کے نتیجے میں وہ زخمی ہوگئی جب کہ گاڑی کے ڈرائیور کو گولیاں مار کر قتل کردیا گیا۔

اخبار ’یروشلم پوسٹ‘ کا کہنا ہے کہ حادثہ برطعہ قصبے میں پیش آیا اور اس میں ایک اسرائیلی خاتون فوجی زخمی ہوئی جبکہ i24 نیوز ٹیلی ویژن نے بتایا کہ زخمی معمولی نوعیت کے ہیں۔

حملہ آور کو گولی مار دی گئی

انہوں نے بتایا کہ حملہ آوروں میں سے ایک کو گولی مار دی گئی، جب کہ دوسرے کو ابتدائی طور پر فرار ہونے میں کامیاب ہونے کے بعد گرفتار کر لیا گیا۔

یہ واقعہ فلسطینی وزارت صحت کی جانب سے اس اعلان کے 48 گھنٹے بعد پیش آیا ہے کہ مغربی کنارے میں اسرائیلی فوج کی فائرنگ سے دو مختلف واقعات میں دو فلسطینی شہید ہوئے، جن میں سے ایک 16 سالہ لڑکا تھا۔

وزارت صحت نے ایک بیان میں اس بات کی تصدیق کی ہے کہ 16 سالہ محمود محمد زعول بیت المقدس کے مغرب میں واقع حوسان میں اسرائیلی فورسز کی گولیوں سے جاں بحق ہوا۔

قبل ازیں وزارت صحت نے ایک بیان میں کہا تھا کہ اسے الخلیل کے شمال میں واقع قصبے سعیر کے قریب اسرائیلی فورسز کی گولیوں سے چھلنی لاش ملی ہے۔ اس کی شناخت 28 سالہ باسل وجیہ المحتسب کے نام سے کی گئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں