فلسطین اسرائیل تنازع

کرسمس کے موقعے پر’ایئر ڈراپ‘ کے ذریعے اردن کی غزہ میں مسیحی برادری کو امداد کی فراہمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اتوار کی شام اردن کی مسلح افواج نے کرسمس کے موقع پر شمالی غزہ کی پٹی میں الزیتون محلے کے پڑوس میں واقع چرچ آف سینٹ پورفیریس کے اندر پھنسے ہوئے لوگوں کی مدد کے لیے ایک امدادی ہوائی جہازسے چرد کے اندر امدادی گرایا۔

اردن کے ایک فوجی ذریعے نے بتایا کہ رائل ایئر فورس کے ایک طیارے نے چرچ کے اندر پھنسے لوگوں تک انسانی امداد اور خوراک کا سامان لے کر لینڈ کیا۔ خیال رہے کہ مذکورہ چرچ دنیا بھر میں قدیم ترین گرجا گھروں میں سے ایک ہے۔

چرچ میں محصور ہونے والوں کی تعداد کا اندازہ لگ بھگ 800 افراد بتایا جاتا ہے جو غزہ کی پٹی کے اندر مسیحی شہری ہیں۔ وہ جنگ کی وجہ سے وہ مشکل انسانی حالات کا شکار ہیں۔ خوراک، پانی اور بنیادی ضروریات کی شدید کمی کے باعث مشکلات سے دوچار ہیں۔

ذرائع نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ غزہ میں "چرچ پر پیراشوٹ کے ذریعے امدادی بکس گرائے گئے۔ اس سامان میں خوراک، پانی اور دیگر ضروریات کا سامان موجود ہے‘‘۔

اردن کا یہ ساتواں ائیر ڈراپ غزہ کی پٹی میں حماس کے خلاف خوفناک اسرائیلی جنگ میں اردن کی طرف سے مسیحی برادری کے ساتھ یکجہتی کا پیغام ہے۔

اردن کے شاہ عبداللہ دوم نے گذشتہ بدھ کو الحسینیہ پیلس میں یروشلم اور اردن کے مذہبی رہنماؤں سے ملاقات کے دوران اس بات پر زور دیا تھا کہ اردن چرچ میں پناہ لینے والوں کو امداد پہنچانے کے لیے ہر طرح سے کوشش کر رہا ہے۔

ذرائع نے کہا کہ شاہی ہدایات پر عمل درآمد کرتے ہوئے اردن غزہ کے عوام کی حمایت جاری رکھیں گے اور اردن فلسطینی قوم کے ساتھ کھڑا رہے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں