فلسطین اسرائیل تنازع

کیااسرائیل یرغمالیوں کے بدلے السنواراورالضیف کوملک بدر کرنے کے آپشن پر غورکررہا ہے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیل کے ایک مؤقر اخبار نے دعویٰ کیا ہے کہ اسرائیلی حکومت غزہ میں یرغمالیوں کے بدلے میں غزہ میں حماس کے لیڈر یحییٰ السنوار اور عسکری ونگ القسام بریگیڈ کے کمانڈر ان چیف محمد الضیف کو بیرون ملک منتقلی کے لیے محفوظ راستہ دینے پر غور کررہی ہے۔

یہ انکشاف ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب دوسری طرف اسرائیل نے اعلانیہ طور پر حماس کی پوری قیادت کو ختم کرنے کا عزم کررکھا ہے۔

اخبار ’ٹائمز آف اسرائیل‘ کی ویب سائٹ کی رپورٹ کے مطابق اسرائیل السنوار اور ضیف دونوں کو قتل نہ کرنے اور انہیں کسی قسم کا استثنیٰ دینے کے آپشن پر غور کر رہا ہے تاکہ حماس کی قید میں موجود یرغمالیوں کی رہائی کے بدلے انہیں دوسرے ملک بھیجا جا سکے۔

ویب سائٹ نے اسرائیلی نشریاتی ادارے کے حوالے سے بتایا کہ نامعلوم اسرائیلی ذرائع نے اس بات کی تصدیق کی کہ سکیورٹی اور سیاسی قیادت نے اس آپشن پر بات چیت کی، حالانکہ اس وقت میز پر کوئی ٹھوس تجویز موجود نہیں ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اس طرح کے آپشن سے فوجی آپریشن کے اصل مقصد کو نقصان نہیں پہنچنا چاہیے، جو کہ حماس کی قیادت اور عسکری صلاحیتوں کو ختم کرنا ہے۔

ایک اور ذریعے نے تصدیق کی کہ حماس کی قیادت کو ملک بدر کرنا اسرائیلی جنگی مقاصد سے متصادم نہیں ہے"۔

حماس نے اسرائیلی فوجی آپریشن کو مزید عارضی طور پر روکنے کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ صرف مستقل جنگ بندی پر بات کرے گی۔

اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو نے اپنے موقف کا اعادہ کیا کہ جنگ اس وقت تک ختم نہیں ہوگی جب تک حماس کا خاتمہ نہیں ہوجاتا، تمام یرغمالیوں کو رہا نہیں کیا جاتا اور غزہ سے اسرائیل کو لاحق خطرے کا ہمیشہ کے لیے سد باب نہیں کیا جاتا۔

کل اتوار کو نیتن یاہو نے اس بات کی تصدیق کی کہ اسرائیلی افواج حماس پر فتح حاصل کرنے تک غزہ میں اپنی کارروائیوں کو مزید گہرا کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ غزہ کی پٹی میں گذشتہ سات اکتوبرسے جاری جنگ کی بھاری قیمت چکانا پڑ رہی ہے۔ ان کا اشارہ 14 فوجیوں کی ہلاکت کی طرف تھا جنہیں دو دن میں غزہ میں حماس کے جنگجوؤں نے قتل کردیا تھا۔

نیتن یاہو نے ہفتہ وار حکومتی اجلاس کے آغاز میں کہا کہ "ہم جنگ میں بہت زیادہ قیمت ادا کرتے ہیں، لیکن ہمارے پاس لڑائی جاری رکھنے کے سوا کوئی چارہ نہیں ہے"۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں