فلسطین اسرائیل تنازع

نیتن یاہو نے یرغمالیوں کے خاندانوں سے مزید وقت مانگ لیا، ورثاء کے ابھی ابھی کے نعرے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو نے پیر کے روز پارلیمنٹ میں اپنے خطاب کے دوران یہ انکشاف کیا ہے کہ غزہ میں اڑھائی ماہ سے جاری شدید جنگ میں ابھی مزید شدت پیدا کرنا ہو گی۔ تاکہ دباؤ بڑھا کر یرغمالیوں کو رہا کرایا جاسکے۔

وہ پارلیمنٹ سے یہ خطاب لیکود پارٹی کے بقول غزہ کے دورے کے بعد کر رہے تھے۔ جہاں ان کی غزہ میں تعینات فوجی کمانڈروں سے بھی یرغمالیوں کے ایشو پر تفصیلی بات چیت ہوئی ، کمانڈروں نے ابھی انہیں یہی بتایا کہ ابھی وقت لگے گا۔

نیتن یاہو کا خطاب سننے اور اپنی سنانے کے لیے اسرائیلی یرغمالیوں کے ورثاء بھی پارلیمنٹ کی گیلریوں میں موجود تھے۔ جب وزیر اعظم نے یہ کہا کہ انہیں یرغمالیوں کو واپسی کے لیے ابھی وقت لگے گا تاکہ غزہ میں فوجی اور جنگی دباؤ بڑھا کر یہ کام کر سکیں تو گیلریوں سے آوازیں آنے لگیں ، نہیں ابھی ابھی ابھی۔

اس پر نیتن یاہو قدرے گھبرا اور جھنجھلا گئے۔ نیتن یاہو کو جوابًا کہنا پڑا ' ہم جنگی دباؤ بڑھائے بغیر یہ کام جلد ممکن نہیں بنا سکتے ۔ میں نے اس سلسلے میں کمانڈروں سے بھی بات کی ہے۔ ان کا جواب بھی یہی تھا کہ انہیں یہ مشن مکمل کرنے کے لیے ابھی مزید وقت چاہیے ہو گا۔ '

یرغمالیوں کے خاندانوں کے نعرے زیادہ تیز ہونے پر نیتن یاہو کو یہ بھی کہنا پڑا ' ہم جنگ کو فتح سے پہلے نہیں روک سکتے، انہوں نے احتجاجی آوازوں کے احتجاج کے بعد کہا۔ '

واضح رہے غزہ میں اسرائیل کے 129 یرغمالی حماس کے پاس قید ہیں۔ ان کے بارے میں یرغمالی خاندانوں میں اس وقت شدید غصہ دیکھنے میں آیا جب اسرائیلی فوجیوں نے خود ہی تین یرغمالیوں کو گولی مار کر غزہ میں ہلاک کر دیا تھا۔

نیتن یاہو نے اپنے پارلیمنٹ سے خطاب میں ورثا ء کے نعرے لگتے رہنے کے بعد یہ بھی کہا ' میں اور میرے ساتھی یرغمالیوں کو واپس گھروں کو لانے کے لیے ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔ لیکن ہم جنگ نہیں رو ک سکتے ، اسے جاری رکھیں گے۔ '

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں