فلسطین اسرائیل تنازع

اردن کے صحراء میں خیمہ بستی، کیا غزہ کے فلسطینیوں کے لیے تیار کردہ کیمپ ہے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اردن کے ایک کے ایک صحرائی علاقے میں تیار کی گئی ایک خیمہ بستی ان دنوں سوشل میڈیا پر تیزی کے ساتھ وائرل ہو رہی ہے۔ سوشل میڈیا صارفین کا دعویٰ ہے کہ یہ ایک پناہ گزین کیمپ ہے جسے غزہ پر اسرائیلی جارحیت اور فلسطینیوں کی ممکنہ نقل مکانی کے تناظر میں تیار کیا گیا ہے۔

اس خیمہ بستی نے سوشل میڈیا پر ایک تنازعے کو جنم دیا ہے اور کہا جا رہا ہے کہ فلسطینیوں کی جبری نقل مکانی کے مخالف اردنی حکام کیسے ایک پناہ گزین کیمپ تیار کرسکتے ہیں۔

اس خیمہ بستی میں بڑی تعداد میں خیمے ۔ شلٹرز اورعارضی مکان تیار کیے گئے ہیں۔ جبکہ بڑی تعداد میں وہاں پر بھاری مشینری کو کام کرتے دیکھا جا سکتا ہے۔

حکومت کا موقف

دوسری جانب اردنی حکام نے نیلے صحرا میں ایک خیمہ بستی کے قیام کو فلسطینیوں کے ساتھ جوڑنے کے تاثرات کو مسترد کردیا ہے۔

اردن کی نیشنل سینٹر فارسکیورٹی اینڈ کرائسز مینجمنٹ اس کیمپ کے قیام کے پیچھے آئیڈیا کی وضاحت کریں۔

انہوں نے کہا کہ صحرائے ازرق کے علاقے میں قائم ایک پناہ گاہ قائم کی گئی ہے۔ یہ ملک کے مشرقی صحرا میں واقع ہے۔ اس طرح کے مراکز ملک کے دوسرے حصوں میں بھی قائم کیے جائیں گے۔ ان خیمہ بستیوں کا مقصد بحرانوں اور قدرتی آفات کے نتیجے میں پیدا ہونے والے ممکنہ خطرے کے جامع منظرناموں سے نمٹنا ہے۔

شمالی سے جنوبی غزہ تک بے گھر افراد - رائٹرز
شمالی سے جنوبی غزہ تک بے گھر افراد - رائٹرز

مرکز نے ایک بیان میں وضاحت کی کہ یہ سائٹ اس سال کے وسط سے کام کر رہی ہے، کا مقصد قدرتی آفات اور اس کے ردعمل اور بچاؤ کے کاموں میں قومی صلاحیتوں کی جانچ کرنا ہے۔

انہوں نے ازرق کی سائٹ میں بنیادی سہولیات شامل ہیں جن میں ہاؤسنگ یونٹس صحت کے مراکز اسکول عبادت گاہیں اور دیگر امدادی خدمات شامل ہیں۔ وہ بحرانوں یا قدرتی آفات سے نمٹنے کے لیے پوری طرح تیار ہیں۔

مرکزکے مطابق یہ بستی ترکیہ اور مراکش کے تباہ کن زلزلوں سمیت خطے میں آفات اور بحرانوں کے تناظر میں اٹھائے گئے اقدامات کے ایک پیکج کے طور پر اٹھایا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں