طائف سے ٹکرانے والا طوفان موسمیاتی تبدیلیوں کا نتیجہ ہے: ماہرین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی ایک ویڈیو میں طائف کے جنوب مشرق میں آنے والے طوفان اور ہلکی بارش کو دیکھا جا سکتا ہے۔ تاہم ماہرین کا کہنا ہے کہ طائف سے ٹکرانے والا طوفان دراصل موسمیاتی تبدیلیوں کا نتیجہ ہے۔

جبکہ قومی موسمیاتی مرکز کے سرکاری ترجمان حسین القحطانی نے کہا کہ مرکز نے اس سال دوسری بار طائف گورنری میں ایک قابل ذکر طوفان کی نشاندہی کی۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ منظرمُملکت کے کچھ خطوں میں ہونے والی موسمیاتی تبدیلیوں کی عکاسی کرتا ہے۔ ہم شہریوں پر زور دیتے ہیں کہ اگرغیرمعمولی موسمی مظاہر نظر آتے ہیں تو مرکز سے اس کے ایمرجنسی ہلپ لائن1987 نمبر پر رابطہ کریں۔

ماہر موسمیات عبدالعزیز الحسینی نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ طائف سے ٹکرانے والا سمندری طوفان ایک چھوٹا طوفان ہے جسے ٹورنیڈو کہا جاتا ہے۔

یہ ایک ہوائی طوفان ہے۔ بعض اوقات پرتشدد، مخروطی بادلوں کی شکل میں ہوتا ہے۔بعض اوقات گاڑھا ہوا دار ہوتا ہے۔ دھول، دباؤ کے علاقے کے گرد بگولے کے گرد گھومتی ہے۔ اس میں ہوا کا کم دباؤ 40 میل (64 کلومیٹر) ہوتا ہے۔ یہ ایک تیز گرج چمک سے زمین کی سطح تک پھیلتا ہے۔ جزیرہ نما عرب میں موسم کا ایک غیر معمولی واقعہ ہوا کی رفتار پر منحصر ہے، اس کا اثر ان جگہوں پر پڑے گا جہاں سے یہ گذرتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں