فلسطین اسرائیل تنازع

غزہ شہر میں پہلی بارامدادی سامان داخل، انسانی تباہی دیکھ کر امریکی ڈاکٹر کانپ اٹھے!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

جنگ کے آغاز کے بعد پہلی بار محصور غزہ شہر میں امدادی سامان پہنچایا گیا جہاں لاکھوں افراد بھوک اور شدید سردی میں تکلیف دہ حالات میں جی رہے ہیں۔

دوسری طرف غزہ کی پٹی میں مریضوں اور زخمیوں کی طبی امداد کے لیے آنے والے ڈاکٹر انسانی تباہی اور زخمیوں کی حالت زار دیکھ کر کانپ کر رہ گئے۔

محصوررہائشیوں کی طرف سے زبردست بھگدڑ کے درمیان امداد داخل ہوئی۔

جنوب میں خان یونس میں اسرائیلی ٹینکوں کی زمینی دراندازی اور فضائی بمباری جاری ہے۔ اسرائیلی فوج نے جنوبی خان یونس کے شہریوں کو وہاں سے نکل جانے کی بھی ہدایت کی ہے۔

العربیہ کے نامہ نگار نے کچھ عینی شاہدین سے ملاقات کی جنہوں نے بتایا کہ الامل ہسپتال کے قرب و جوار میں واقع الامل محلے پر اسرائیلی فوج نے وحشیانہ بمباری کی ہے جس کے نتیجے میں متعدد شہریوں کے شہید اور زخمی ہونے کا اندیشہ ہے۔

درایں اثناء امریکی ڈاکٹروں کا ایک وفد غزہ کی پٹی کے خان یونس شہر میں زخمیوں کے سرجیکل آپریشن کے لیے پہنچا ہے۔ یہ سرجریز رواں ہفتے ہونے والی ہیں مگر دوسری طرف ہسپتالوں میں ناقص آلات اور طبی سامان کی عدم موجودگی کی وجہ سے ڈاکٹروں کو مشکلات کا سامنا ہے۔

امریکی وفد کے جنرل سپروائزر نے اس تناظر میں کہا کہ "تمام جگہوں پر ہر طرف تباہی ہسپتالوں میں لوگوں کو اپنی مرضی سے نہیں بلکہ منصوبے کے مطابق گھروں سےنکالتے ہوئے دیکھنا دل دہلا دینے والا ہے۔ میرا مطلب ہے کہ شدید سردی میں پلاسٹک کے خیموں میں رہنے والوں کو دیکھ کر دل کانپ اٹھتا ہے"۔

ایک چھوٹی بس سرجنوں کو ناصر میڈیکل کمپلیکس اور غزہ کے یورپی ہسپتال لے گئی جہاں انہیں غزہ کی پٹی کے محصور باشندوں کو طبی خدمات فراہم کرنے کے لیے ایک ہفتے تک قیام کرنا ہے۔

غزہ کی پٹی میں ہسپتالوں کے ڈائریکٹر جنرل محمد ذقوت نے کہا کہ "ہم نے بارہا درخواست کی ہے کہ ایسے وفود غزہ کی پٹی میں داخل ہوں، ان کی اشد ضرورت ہے۔ غزہ کی پٹی کے ہسپتالوں میں بے شمار زخمیوں کے آپریشن کرنے کی فوری ضرورت ہے۔ یقیناً ڈاکٹروں کے وفود میں ماہر سرجن شامل ہیں جو نازک سرجری کر سکتے ہیں۔ انشاء اللہ جب تک وہ رہیں گے غزہ میں زخمیوں کے علاج میں مدد ملے گی اور انہیں فائدہ پہنچے گا‘‘۔

امریکی سرجن ہسپتال میں زخمیوں کی حالت دیکھ کر کانپ گیا

فلسطینی ڈاکٹروں کے مطابق امریکی ڈاکٹروں کے وفد میں مطلوبہ خصوصیات مثلاً نیورو سرجری، جنرل سرجری، آرتھوپیڈکس اور اینستھیزیا کو اکٹھا کیا لیکن یہ آخری نہیں ہوگا۔

اس حوالے سے رحمت فاؤنڈیشن کے دنیا بھر میں دفتر کے ڈائریکٹر محمد قدوس نے کہا کہ آنے والے دنوں میں اور بھی وفود آئیں گے جو غزہ کی پٹی میں ہمارے زخمی اور سوگوار بچوں کی خدمت کر سکیں گے۔

خان یونس کے مشرق اور مرکز کے علاقوں پر مسلسل بھاری اسرائیلی توپ خانے کی گولہ باری کے تناظر میں عالمی ادارہ صحت نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ غزہ کے رہائشیوں کو درپیش سنگین خطرے کو کم کرنے کے لیے فوری اقدامات کرے۔

فلسطینی محکمہ صحت کے حکام نے اس سے قبل کہا تھا کہ گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران اسرائیلی حملوں کے نتیجے میں 210 فلسطینیوں کی شہادت کی تصدیق ہوئی ہے، جس سے جنگ میں اب تک شہید ہونے والوں کی تعداد 21,320 ہو گئی ہے۔ یہ ہلاکتیں غزہ کی کل آبادی کا ایک فی صد بنتی ہے۔

جنگ کے دوران اسرائیلی فوج نے شہریوں کی ہلاکت پر افسوس کا اظہار کیا، لیکن حماس پر گنجان آباد علاقوں میں اپنی سرگرمیاں چلانے یا عام شہریوں کو انسانی ڈھال کے طور پر استعمال کرنے کا الزام لگایا مگر حماس اسرائیل کے ان الزامات کو مسترد کرتی ہے۔

امریکا کی طرف سے جنگ کو محدود کرنے پر زور دینے کے باوجود اسرائیل نے کرسمس کے موقع پر غزہ میں اپنی زمینی جنگ کو بڑھا دیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں