اسرائیل نے فلسطینی مسلمانوں کو مسجد اقصیٰ میں نماز جمعہ کی ادائیگی سے روک دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جمعہ کے روز اسرائیلی فورسز نے فلسطینی مسلمانوں کو مسجد اقصیٰ میں داخل ہونے سے زبردستی روک دیا جس کے بعد فلسطینی مسلمانوں کی ایک بڑی تعداد نے گلیوں میں نماز جمعہ ادا کی۔

اس موقع پر مسجد اقصٰی کے اردگرد اور مسجد اقصیٰ کے درازوں پر سیکورٹی اہلکاروں کی بھاری نفری تعینات کر رکھی تھی تاکہ مسجد اقصیٰ میں نماز جمعہ نہ پڑھی جاسکے۔ ایک فلسطینی نے بتایا سات اکتوبر کے حملوں کے بعد سے اسرائیلی فورسز صرف بوڑھے لوگوں، خواتین اور بچوں کو مسجد اقصیٰ جانے کی اجازت دے رہے ہیں۔

واضح رہے کہ اسرائیلی فورسز کا یہ معمول ہے کہ وہ جب چاہے نمازیوں کا مسجد اقصیٰ میں جانے سے روک دیتی ہیں اور جب چاہے صرف نوجوانوں کو مسجد اقصیٰ جانے روک دیتی ہیں۔

مسجد اقصیٰ مسلمانوں کا تیسرا اہم اور مقدس ترین مرکز ہے جس پر کنٹرول اسرائیل کرتا ہے۔ اسرائیلی فورسز اپنی نگرانی میں یہودی آبادکاروں کو صحن مسجد میں اپنی مذہبی رسومات کی ادائیگی کے لیے باقاعدگی سے لاتے رہتے ہیں۔ ایسے موقع پر مسلمانوں کی مسجد اقصیٰ میں نقل و حرکت بند کردی جاتی ہے۔ اسرائیلی فورسز کی طرف سے رکاوٹ ڈالنے کی وجہ سے بڑی تعداد میں فلسطینی مسلمانوں نے گلیوں میں نماز جمعہ ادا کی۔

اسرائیلی فورسز نے 7 اکتوبر کے بعد سے اب تک مغربی کنارے میں سوا تین سو کے قریب فلسطینوں کو شہید کردیا ہے جبکہ رواں سال میں مغربی کنارے اور یروشلم میں سوا پانچ سو سے زائد فلسطینیوں کو شہید کر دیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں