اسرائیل کو امریکہ کی ہنگامی اسلحہ ترسیل قابل مذمت ہے: حماس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ کی حکمران جماعت اور فلسطینی مزاحمتی گروپ حماس نے بائیڈن انتظامیہ کی جانب سے اسرائیل کو ہنگامی بنیادوں پر اسلحہ فراہمی کی مذمت کی ہے۔ امریکہ نے جمعہ کے روز اسرائیلی کی ہنگامی جنگی ضرورت کے تحت کانگریس کی منظوری کے بغیر اس سلسلے میں فیصلہ کیا ہے۔

امریکہ کے ہنگامی فیصلے کے باعث اسرائیل کو 147 اعشاریہ 5 ملین ڈالر کی جنگی امداد ملے گی۔ اس جنگی سامان میں توپ خانے کا گولہ بارود بھی شامل ہے۔

حماس نے اس امریکی فیصلے کی مذمت کی اور کہا ' اس سے صاف پتہ چلتا ہے کہ ' امریکی انتظامیہ غزہ میں اسرائیلی جنگی جرائم کی سرپرست ہے۔ '

حماس کے مذمتی بیان میں مزید کہا گیا ہے' جوبائیڈن انتظامیہ بڑے کھلے انداز میں خود کو غزہ میں اسرائیلی جرائم کے ساتھ جوڑے ہوئے اورپوری طرح ان کی حمایت میں ظاہر کررہی ہے ۔'

حماس کے مذمتی بیان کے مطابق 'امریکہ اور اس کی جوبائیڈن انتظامیہ خود کو اسرائیل کے ان جرائم سے جڑے ہوئے بتارہی ہے جن میں ہزاروں بچوں سمیت 21 ہزار سے زائد افراد شہید کیے گئے ہیں۔ پوری آبادی کے ایک ایک گھر کو تباہ کرنے کی کوشش کی گئی اور لاکھوں شہریوں کو نقل مکانی پر مجبور کر دیا گیا۔'

واضح رہے امریکہ نے پچھلے تین ماہ کے دوران اسرائیل کی گزہ میں جنگ کے لیے تیسری مرتبہ ہنگامی اؒتیارات کے تحت فوجی امداد اور اسلحہ اسرائیل بھجوانے کی منظوری دی ہے اور اس سلسلے میں کانگریس کی منظوری سے ماوراء طریقہ اپنایا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں