' شاہ سلمان ریلیف' یمنی بچیوں کے روشن مستقبل کے لیے پیش پیش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے بین الاقوامی سطح پر خیر خواہی اور انسانی بھلائی کے کاموں کے لیے مصروف ' شاہ سلمان ریلیف' نے حال ہی میں یمن میں بچیوں کی تعلیم و تربیت کے لیے ایک اور منصوبہ شروع کیا ہے۔ اس منصوبے کے تحت ان بچیوں کی تربیت مقصود ہے جو تعلیم کے لیے کسی وجہ سے سکول سے محروم ہو گئی ہیں۔

14 تربیتی کورسز کے تحت اس زمرے میں آنے والی یمنی بچیوں کو سلائی ، کڑھائی، عطریات سازی ، فوٹو گرافی ، کوکنگ اور دیگر دستکاریوں کی تربیت دی جانے کے علاوہ جدید ٹیکنالجی کے استعمال کے حوالے سے بھی ہنر مند بنایا جا رہا ہے۔ اس منصوبے میں یتم بچیوں کو خصوصی اہمیت دی جاتی ہے تاکہ بے سہارا بچیوں کا مستقبل بھی محفوظ اور روشن ہو سکے اور وہ اپنا سہارا خود بن سکیں۔

شاہ سلمان ریلیف کے سامنے مقصد یہ ہے کہ یہ یمنی بچیاں اپنی مدد آپ کے تحت جی سکیں اور ان کا مستقبل کسی پریشانی میں گھرا ہوا نہ رہے۔ یمن کا تعلیمی شعبہ بھی بھی اس سلسلے سعودی عرب کےساتھ جڑا ہوا ہے۔

بتایا گیا ہے کہ اس سعودی منصوبے سے اب تک 280 یمی بچیاں منر مندی اور مہارتیں حاصل کر چکی ہیں۔ اس منصوبے کے تحت تربیت پانےوالی بچیوں نے لحج، ابیان، مارب، حضر موت وغیرہ میں قائم اداروں سے استفادہ کیا ہے۔

علاوہ ازیں شاہ سلمان ریلیف یمن کی گورنری الڈھیل میں گردوں کے عارضے میں مبتلا مریضوں کے لیے ' ڈائیلاسس ' کا انتطام کر رکھا ہے۔ شاہ سلمان ریلیف نے ڈی سیلینیشن کے پلانٹ کے لیے بھی بھرتیاں کی گئی ہیں۔

شاہ سلمان ریلیف نے پاکستان میں 1500 فوڈ باسکٹ سیلاب زدہ علاقوں میں تقسیم کی ہیں۔ یہ امدادی سرگرمیاں سبی، اور قلات کے علاقوں میں کی گئی ہیں۔ جن سے 10500 افراد کو فائدہ ملا ہے۔

واضح رہے 2015 سے شاہ سلمان ریلیف نے 2670 منصوبے شروع کیے ہیں۔ جن پر چھ اعشاریہ پانچ ارب ڈالر کا خرچہ آیا ہے۔ یہ منصوبے دنیا کے 95 ملکوں میں بروئے کار رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں