فلسطین اسرائیل تنازع

غزہ میں ایک اور اسرائیلی یرغمالی کی ہلاکت کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ میں یرغمال بنائے گئے ایک اور اسرائیلی یرغمالی کی ہلاکت کی اطلاع ملی ہے۔ اس ہلاکت کی اطلاع اسرائیلی کمیونٹی کی طرف سے دی گئی ہے۔ بتایا گیا ہے کہ جس یرغمالی کی ہلاکت کی تازہ اطلاع ہے اسے سات اکتوبر کو اٹھایا گیا تھا۔

اس یرغمالی کی عمر 38 سال اور نام تمیر آدر بتایا گیا ہے۔ اسرائیلی کمیونٹی نے اس کی موت کی اطلاع جمعہ کے روز دی ہے۔ اس سے پہلے تین یرغمالی اسرائیلی فوج کے ہاتھوں بے رحمانہ طریقے سے مارے گئے تھے۔

نئے مرنے والے یرغمالی کی کمیونٹی کا تعلق جنوبی اسرائیل میں کبٹتز نیر کمیونٹی کے ساتھ ہے۔ بتایا گیا ہے کہ سات اکتوبر کو جن 250 اسرائیلیوں کو اسرائیل کے اندر سے اٹھا لیا گیا تھا ان میں سب سے زیادہ اسی کبٹز نیر اوز کمیونٹی سے تعلق رکھنے والے لوگ تھے۔ یعنی 80 یرغمالی کبٹز نیر اوز سے تعلق رکھے تھے۔

ادھر کمیونٹی کے افراد نے جمعہ کے روز اپنے اس ایک عزیز کی غزہ میں موت کی خبر تو دی ہے تاہم یہ نہیں بتایا کہ اس کی موت کب ہوئی اور کس علاقے میں ہوئی، نیز اس کی موت کا سبب کیا بنا ہے۔ آیا یہ بھی اسرائیلی فوج کے ہاتھوں ہی مارا گیا یا اس کی ہلاکت کی وجوہات مختلف ہیں۔

واضح رہے سات اکتوبر کو حماس نے جن 250 اسرائیلیوں کو اسرائیل میں گھس کر پکڑا تھا۔ ان میں سے بڑاحصہ اسرائیل کے ساتھ ہونے والے جنگ بندی معاہدے کے نتیجے میں رہا کر دیا گیا تھا۔

تاہم اسرائیل کا دعویٰ ہے کہ اب بھی 113 یرغمالی حماس کے پاس ہیں۔ جبکہ حماس کا کہنا ہے کہ جنگ بندی اور اسرائیل فوج کے غزہ سے انخلاء سے پہلے اب کوئی یرغمالی نہیں چھوڑا جائے گا۔ اب تک غزہ میں 22600 فلسطینی ہلاک کیے جا چکے ہیں۔ جن میں بڑی تعداد بچوں اور فلسطینی عورتوں کی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں