حزب اللہ کمانڈر کے جنازے کے دوران اسرائیل نے ایک اور گاڑی پرحملہ کردیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج نے جنوبی لبنان کے سرحدی علاقے میں میں گذشتہ روز ڈرون حملے میں مارے جانے والے حزب اللہ کمانڈر وسام الطویل کے جنازے کے جلوس پر حملہ کیا ہے جس میں کم سے کم ایک شخص ہلاک اور تین زخمی ہوگئے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق حزب اللہ کے فیلڈ کمانڈر وسام طویل کو سوموار کے روز اسرائیل نے ایک ڈرون حملے میں ہلاک کردیا تھا۔

آج منگل کو لبنان کے سرحدی قصبےخربہ سلم میں مقتول کمانڈر کی لاش کو تدفین کے لیے لے جایا جا رہا تھا جب جنازے کے جلوس میں شامل ایک گاڑی پر حملہ کیا گیا۔

العربیہ/الحدث کے نامہ نگار کے مطابق اسرائیلی بمباری میں خربہ سلام قصبے میں جنازے کے مقام کے قریب ایک کار کو نشانہ بنایا گیا۔

حزب اللہ کے 2 ارکان ہلاک

خبررساں ادارے ’رائیٹرز‘ کے مطابق حزب اللہ کی کارروائیوں سے واقف دو لبنانی ذرائع نے بتایا کہ نبطیہ گورنری کے علاقے الغندوریہ میں ایک کار پر حملہ کیا۔ اس کارروائی میں تین افراد ہلاک ہوگئے۔

جبکہ ایرانی حمایت یافتہ حزب اللہ نے اعلان کیا کہ مذکورہ اسرائیلی حملے میں اس کے صرف 2 ارکان مارے گئے۔

یہ واقعہ اس وقت سامنے آیا جب حزب اللہ نے اس بات کی تصدیق کی کہ اس کے جنگجوؤں نے شہر صفد (دادو بیس) میں اسرائیلی فوج کے شمالی علاقے کی کمان کے ہیڈ کوارٹر کو متعدد حملہ آور ڈرونز کے ذریعے نشانہ بنایا۔

اسرائیل نے تسلیم کیا کہ اس کے ایک فوجی اڈے کو نشانہ بنایا گیا۔ کوئی مادی یا انسانی نقصان نہیں ہوا۔

مہلک حملے

کل پیرکو ایک اسرائیلی ڈرون حملے میں حزب اللہ کے رہ نما وسام حسن الطویل کو نشانہ بنایا گیا۔ ملک کے جنوب میں اس کی کارروائیوں کے دوران حزب اللہ کے لیے اب تک کا سب سے تکلیف دہ دھچکا تھا۔

الطویل "الرضوان یونٹ" میں ایک عہدیدار کے طور پر جانے جاتے تھے۔ یہ یونٹ حزب اللہ کی ایلیٹ یونٹ قرار دی جاتی ہے۔ اس پر اسرائیلی فوجی کیمپوں پر حملوں کا الزام عاید کیا گیا ہے۔

اب تک اسرائیل اور لبنان کی سرحد پر دونوں فریقوں کے درمیان ہونے والی باہمی تصادم کے نتیجے میں لبنانی جانب سے کم از کم 176 افراد ہلاک ہو چکے ہیں جن میں حزب اللہ کے 130 سے زائد ارکان بھی شامل ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں