فلسطین اسرائیل تنازع

کوئی لبنانی گاؤں اسرائیل کی دسترس سے باہر نہیں: آرمی چیف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل کے آرمی چیف نے بدھ کو کہا کہ ان کے فوجی لبنان کے اندر کسی بھی گاؤں کو تباہ کر سکتے ہیں جس سے سرحد کے اس پار قائم حزب اللہ گروپ کے خلاف بیان بازی میں اضافہ ہوا ہے۔

اسرائیلی فوج 7 اکتوبر کو غزہ میں جنگ شروع ہونے کے بعد سے تقریباً ہر روز ایران کے حمایت یافتہ حزب اللہ کے ساتھ فائرنگ کا تبادلہ کر رہی ہے جو فلسطینی گروپ حماس کا ایک اہم اتحادی ہے۔

اسرائیل کے چیف آف اسٹاف ہرزی حالوی نے غزہ میں فوجیوں کے ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ محصور فلسطینی علاقے میں ان کی کارروائیوں نے انہیں یقین دلایا ہے کہ اگر ضرورت پڑی تو وہ لڑائی کو لبنان کی سرزمین میں لے جا سکتے ہیں۔

اسرائیلی فوج کے ایک بیان کے مطابق انہوں نے کہا، "ہم نے غزہ میں جنگ لڑی ہے اس لیے ہم جانتے ہیں کہ اگر یہ کرنا پڑے تو لبنان میں کیسے کرنا ہے۔"

"جو کچھ آپ نے (غزہ میں) کیا، اس کے بعد لبنان کا کوئی گاؤں ایسا نہیں ہے جہاں آپ داخل ہو کر تباہ نہ کر سکیں۔"

اے ایف پی کے مرتب کردہ اعداد و شمار کے مطابق سرحدی کشیدگی کے آغاز کے بعد سے لبنان میں 188 افراد جاں بحق ہو چکے ہیں جن میں حزب اللہ کے 141 ارکان اور تین صحافیوں سمیت 20 سے زائد عام شہری شامل ہیں۔

اسرائیلی فوج کا کہنا ہے کہ نو فوجیوں سمیت 14 اسرائیلی مارے گئے ہیں۔

جہاں حزب اللہ نے کہا ہے کہ وہ غزہ کی حمایت میں اسرائیلی فوجی مقامات کو نشانہ بنا رہا ہے تو اسرائیلی فوج کہتی ہے کہ اس کے فضائی اور توپ خانے کے حملوں کا مقصد شیعہ گروپ کے بنیادی ڈھانچے اور سرحد کے ارد گرد اس کے مزاحمت کاروں کی نقل و حرکت کو منتشر کرنا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں