فلسطین اسرائیل تنازع

اسرائیل کے خلاف نسل کشی کا مقدمہ،نیتن یاہو کا جنوبی افریقہ پر منافقت اور جھوٹ کاالزام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

اسرائیلی وزیرِ اعظم بنجمن نیتن یاہو نے جمعرات کو کہا کہ اقوامِ متحدہ کی اعلیٰ عدالت میں منافقت اور جھوٹ پیش کیا گیا ہے اور مزید کہا کہ جنوبی افریقہ کا اسرائیل پر غزہ میں نسل کشی کا الزام صرف اس وقت ممکن ہے جب دنیا الٹ جائے۔

نیتن یاہو نے کہا، "ہم دہشت گردوں سے لڑ رہے ہیں، جھوٹ سے لڑ رہے ہیں۔ آج ہم نے ایک الٹائی ہوئی دنیا دیکھی۔ اسرائیل پر نسل کشی کا الزام ہے جبکہ وہ نسل کشی کے خلاف لڑ رہا ہے۔

انھوں نے کہا، "اسرائیل ان قاتل دہشت گردوں سے لڑ رہا ہے جنہوں نے انسانیت کے خلاف جرائم کیے: انھوں نے ذبح کیا، عصمت دری کی، جلایا، ٹکڑے ٹکڑے کیے، انھوں نے سر قلم کیے - بچوں، عورتوں، بزرگوں، جوان مردوں اور عورتوں کے۔"

نیتن یاہو نے کہا، "جنوبی افریقہ کی منافقت آسمانوں تک پہنچ جاتی ہے۔ جنوبی افریقہ تب کہاں تھا جب شام اور یمن میں لاکھوں لوگ ہلاک یا گھروں سے بےگھر ہوئے، کس کے ہاتھوں؟ حماس کے شراکت داروں کے ہاتھوں۔"

نیتن یاہو نے کہا کہ اسرائیل کا حقِ دفاع اس وقت تک برقرار رہے گا جب تک وہ "مکمل فتح" حاصل نہ کر لے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں