سعودی عرب کایمن میں فضائی حملوں پر تشویش کااظہار کرتے ہوئے تحمل سے کام لینے کا مطالبہ

امریکہ، برطانیہ نے ایک درجن سے زائد حوثی مقامات کو دن کے اوائل میں نشانہ بنایا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

سعودی عرب نے جمعے کے اوائل میں کہا ہے کہ وہ بحیرۂ احمر کے علاقے میں ہونے والی فوجی کارروائیوں اور یمن میں متعدد مقامات پر فضائی حملوں کو "بڑی تشویش" کے ساتھ دیکھ رہا ہے۔

سعودی پریس ایجنسی کے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا، "جبکہ مملکت بحیرۂ احمر کے خطے کی سلامتی اور استحکام کو برقرار رکھنے کی اہمیت پر زور دیتی ہے جس میں جہاز رانی کی آزادی ایک بین الاقوامی مطالبہ [اور] پوری دنیا کے مفاد میں ہے تو خطے میں جاری واقعات کی روشنی میں [سعودی عرب] تحمل اور کشیدگی سے گریز کرنے کا مطالبہ کرتا ہے۔"

یہ بیان امریکہ اور برطانیہ کے اعلان کے کچھ ہی دیر بعد سامنے آیا کہ انہوں نے یمن میں ایران کے حمایت یافتہ حوثیوں کے زیرِ استعمال ایک درجن سے زیادہ مراکز کو نشانہ بنایا تھا۔ امریکی فوج کے مطابق حوثیوں نے 19 نومبر سے بحیرۂ احمر میں بین الاقوامی نقل و حمل پر 27 حملے کیے ہیں۔

واشنگٹن اور کئی ممالک نے اس سے قبل گروپ کو خبردار کیا تھا کہ وہ اپنے حملے بند کر دے ورنہ نتائج کا سامنا کرے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں