عراق میں فوجی اڈے پر حملے میں پانچ ترک فوجی ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ترکیہ کی وزارتِ دفاع نے جمعے کو بتایا کہ شمالی عراق میں ترک فوجی مرکز پر حملے میں پانچ ترک فوجی ہلاک جبکہ آٹھ زخمی ہو گئے۔

وزارت نے کہا کہ یہ فوجی شمالی عراق میں میٹینا کے قریب مرکز میں "دراندازی کی کوشش" کے بعد "دہشت گردوں" کے ساتھ جھڑپ کے دوران جان سے ہاتھ دھو بیٹھے۔

نجی ترک چینل این ٹی وی نے رپورٹ کیا کہ حملہ آوروں کا کردستان ورکرز پارٹی (پی کے کے) سے تعلق تھا جسے انقرہ اور اس کے مغربی اتحادی دہشت گرد گروپ قرار دیتے ہیں۔

ترک حکام نے اعلان کیا کہ اس حملے کے جواب میں علاقے میں فوجی کارروائی جاری ہے۔

گذشتہ ماہ کے اواخر میں شمالی عراق میں ترک فوجی مراکز پر دو الگ الگ حملوں میں 12 ترک فوجیوں کی ہلاکت کی اطلاعات موصول ہوئی تھی۔

ترک فوج شمالی عراق میں جنگجوؤں اور ان کے ٹھکانوں کے ساتھ ساتھ خود مختار کردستان یا ترکی کی سرحد کے قریب سنجر کے پہاڑی علاقے میں باقاعدگی سے فوجی زمینی اور فضائی کارروائیاں کرتی ہے۔

گذشتہ 25 سالوں میں ترکی نے عراقی کردستان میں اس گروپ سے لڑنے کے لیے کئی درجن فوجی مراکز قائم کیے ہیں۔

پی کے کے 1984 سے انقرہ کے خلاف مسلح جدوجہد میں شامل ہے، جس نے گذشتہ اکتوبر میں انقرہ میں ترکی کی وزارت داخلہ کے ہیڈ کوارٹر پر حملے کی ذمہ داری قبول کی تھی جس میں دو پولیس اہلکار زخمی ہوئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں