فلسطین کی فٹ بال ٹیم غزہ کی خبروں سے پریشان، کھیل پر توجہ مشکل ہو گئی: ٹیم کوچ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فٹبال ٹیم کے فلسطینی کوچ نے ایشین کپ میں فلسطینی کھلاڑیوں کے لیے غزہ میں مسلسل اسرائیلی بمباری اور تقریباً 24 ہزار ہلاکتوں نے ٹورنامنٹ کو مشکل بنا دیا ہے۔ یہ بات فلسطینی کوچ نے ہفتے کے روز اس وقت کہی ہے جب غزہ میں اسرائیلی جنگ کے 100 دن ہوے ہی چاہتے ہیں۔

تاہم کوچ نے کہا بلا شبہ غزہ میں فلسطینیوں پر جاری بمباری سے کھلاڑی متاثر ہورے ہیں۔ لیکن ہمیں اس کے باوجود اپنی موجودگی کو یہاں باقی رکھنا ہے تاکہ فلسطینیوں کو آج جن مشکلات کا سامنا ہے دنیا کے سامنے بھی لا سکیں۔'

فٹبال کوچ نے کہا ' ایمانداری کی بات یہ ہے کہ اس ماحول میں غزہ میں فلسطینیوں پر بمباری جاری ہے اور ہر روز ہلاکتیں ہو رہی ہیں کھیل پر توجہ کا پوری طرح ' فوکسڈ ' رہنا بہت مشکل ہے۔'

انہوں نے کہا ' ہمارے کھلاڑی ہر وقت ان خبروں سے پریشان ہو رہے ہیں جو لمحہ بہ لمحہ سامنے آرہی ہیں۔ حتیٰ کہ ٹریننگ کے لیے بسوں پر آتے جاتے بھی فلسطینی کھلاڑیوں کی توجہ میں خبریں رہتی ہیں۔ یہ بات کوچ نے ایران کے ساتھ امکانی میچ سے ایک روز قبل کہی ہے۔'

'مگر ہم میچ میں رہیں گے تاکہ ان حالات میں بھی دنیا کو بتا سکیں کہ فلسطینی عوام بھی ایک بہتر زندگی چاہتے ہیں اور آزادی کے ساتھ جینے کا حق مانگتے ہیں۔ ہم یہاں میچ میں بھی فلسطین کے نمائندے ہیں، اس لیے ہمارے اوپر بھاری ذمہ داری ہے' کوچ نے مزید کہا ۔

فلسطینی ٹیم کے کپتان مصعب نے کہا ' تین ماہ کے دوران ہمارے کھلاڑیوں پر اس بات کے بھی بہت منفی اثرات پڑے ہیں کہ غزہ سے باہر جن کھلاڑیوں نے تربیتی کیمپوں میں جانا تھا وہ بھی بری طرح متاثر ہوئے ہیں۔ لیکن ہمیں امید ہے کہ ایشین کپ میں ہماری موجودگی کے ذریعے دنیا کو بہت موثر پیغام جائے گا۔ ہم دنیا کو بتا سکیں گے فلسطین ایک ملک ہے۔ ہمیں بھی آزادی چاہیے

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں