فلسطین اسرائیل تنازع

ادویات کی ترسیل کے معاہدے کے لیے قطر کے شکر گذار ہیں: حماس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

غزہ کی پٹی پر ادویات کی ترسیل ممکن بنانے کے معاہدے کے سلسلے میں حماس کے ایک رہنما نے قطر کا شکریہ ادا کیا ہے۔ یہ شکریہ غزہ میں بے شمار زخمیوں اور مریضوں کو طویل انتظار کے بعد ادویات کی دستیابی کی امید پیدا ہونے کے سلسلے میں ادا کیا گیا ہے۔

بتایا گیا ہے کہ ان ادویات میں سے کچھ ادویات اسرائیل کے حماس کے پاس موجود قیدیوں کے علاج معالجے کے لیے کام آئیں گی۔ حماس رہنما اسامہ حمدان نے اس امر کا اظہار لبنانی دارالحکومت بیروت میں ایک نیوز کانفرنس کے دوران کیا ہے۔

واضح رہے اسرائیل نے ابتدائی طور پر یہ پیش کش کی ہے کہ وہ غزہ میں اپنے یرغمالیوں کے لیے ادویات بھجوانے کو تیار ہے۔ اسرائیل کی غزہ کے لیے ادویات روکنے کی سخت اور طویل پالیسی میں یہ نرمی یرغمالوں کے خاندانوں کی مرتب کردہ اس رپورٹ کے سامنے آنے کے بعد آئی جس میں کئی یرغمالیوں کو شدید بیمار ظاہر کی گیا ہے۔

مگر اسامہ حمدان کی طرف سے اس بارے میں کہا گیا ہے کہ 'اس سے دو مسئلے پیدا ہوں گے۔ ایک یہ کہ خود غزہ کے لوگ یرغمالیوں سے بھی کہیں زیادہ ادویات کے مستحق ہیں۔ انہیں یہ ادویات نہیں مل سکیں گی، دوسرا مسئلہ یہ بنے گا کہ اس سے سیکورٹی کا 'ایشو' بھی سامنے آ سکتا ہے۔'

اس تناظر میں اسرائیل نے جمعہ کے روز قطر میں حکام کے ساتھ معاہدے پر اتفاق کیا ہے۔ کہ اسرائیلی یرغمالیوں کو ادویات فراہم کی صورت پیدا کی جائے۔ تاہم حماس رہنما حمدان نے نیوز کانفرنس کے دوران کہا 'ہماری ترجیح غزہ میں فلسطینی زٰخمی اور مریض ہی رہیں گے۔'

مقبول خبریں اہم خبریں