جنگ سے بچ کر امریکا کے پاس حوثیوں پر دباؤ بڑھانے کے لیے کون سے آپشنز ہیں؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکا یمن میں حوثی حملوں کے خلاف بحیرہ احمر میں جہاز رانی کی حفاظت کے لیے کوششیں جاری رکھے ہوئے ہے۔ اس ضمن میں امریکا نے یمن کے اندر حوثیوں کے حملوں کا جواب دینے کے لیے کارروائی کی ہے مگرامریکا کی کوشش ہے کہ دو طرفہ کارروائی سے پورا خطہ جنگ کی لپیٹ میں نہ آئے۔

حوثیوں کے ٹھکانوں پر حملوں کے علاوہ واشنگٹن دیگر آپشنز پر غور کر رہا ہے۔

العربیہ/الحدث کے نامہ نگار کے مطابق ان اختیارات میں سے فروری 2021 میں امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ کی جانب سے حوثی گروپ کو دہشت گردی کی فہرست میں شامل کرنے کے بعد اسے دوبارہ دہشت گردی کی فہرست میں شامل کرنا ہے۔

یہ حوثیوں پر دباؤ ڈالنے کے لیے ایران کو مزید پیغامات بھیجنے کا بھی ایک آپشن ہے۔

ڈیٹا اکٹھا کرنا

کئی مبصرین کے مطابق برسوں کے وقفے کے بعد زمین پر انٹیلی جنس معلومات کو تیز کرنے کے علاوہ مزید حوثی فوجی مقامات کی نشاندہی کرنے کے لیے جاسوسی بھی امریکا کے پاس ایک آپشن ہوسکتا ہے۔

اس تناظرمیں امریکن انٹرپرائز انسٹی ٹیوٹ کی انسداد دہشت گردی کی ماہر کیتھرین زیمرمین نے کہا کہ امریکی حکومت بعض اوقات حوثیوں کی عسکری صلاحیتوں سے حیران ہوتی ہے۔

وال سٹریٹ جرنل کے مطابق انہوں نے مزید کہا کہ امریکی انٹیلی جنس کو ممکنہ طور پر یہ معلوم نہیں ہے کہ حوثیوں کے بہت سے ہتھیار کہاں محفوظ ہیں۔ ایسا لگتا ہے کہ اب تک کے حملوں میں ان مقامات کو نشانہ بنایا گیا ہے جن کی نگرانی کی جا سکتی ہے۔

مشرق وسطیٰ میں وسیع تجربہ رکھنے والے سی آئی اے کے ایک ریٹائرڈ افسر ڈگلس لنڈن نے کہا کہ انٹیلی جنس وسائل میں اضافہ ہوا ہے۔ خاص طور پر حوثی حملوں میں اضافے کے ساتھ حالیہ ہفتوں میں جاسوسی سیٹلائٹ اور جاسوسی آلات کی مدد سے حوثیوں کے خلاف جاسوسی تیز کی گئی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "وہاں انسانی وسائل [ایجنٹوں] کی بھرتی کرنا ممکن ہے لیکن انہوں نے نشاندہی کی کہ یہ کوششیں یمنی قبائلی اور مہذب معاشرے اور حوثیوں کی تنہائی پسند فطرت کی وجہ سے پیچیدہ ہیں۔"

ان تمام آپشنز کے باوجود گذشتہ جمعہ اور ہفتہ کو کیے گئے مشترکہ برطانوی-امریکی حملوں کے بعد علاقائی کشیدگی کا خطرہ کم ہے کیونکہ ایران جیسے بڑے کھلاڑی علاقائی جنگ سے بچنے کے خواہشمند ہیں۔

سات اکتوبرکوغزہ کی پٹی پراسرائیلی جنگ شروع ہونے کے بعد سے حوثیوں نے بحیرہ احمر میں سفر کرنے والے تجارتی بحری جہازوں پر درجنوں حملے کیے ہیں۔ اس کی وجہ سے نقل و حمل کی لاگت میں دوگنا اضافہ ہوا، جس کے نتیجے میں شپنگ کمپنیوں نے جنوبی افریقہ کی طرف سے اپنے بحری جہازوں کا راستہ تبدیل کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں