اسرائیلی فورسز کا غرب اردن کی سب سے بڑی فلسطینی یونیورسٹی پر دھاوا،20 افراد گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ کی پٹی پر اسرائیل کی جنگ ایک سو ایک دن میں جاری ہے۔ دوسری جانب مغربی کنارے پر اس کے روزانہ کے چھاپوں میں مزید درجنوں فلسطینیوں کو حراست میں لیا گیا ہے۔

آج سوموار کے روز اسرائیلی فورسزنے غرب اردن کے شمالی شہرنابلس میں واقع النجاح نیشنل یونیورسٹی پر دھاوا بولا۔ انہوں نے یونیورسٹی کے کیمپس میں گھس کر تلاشی لی اور وہاں سے طلبا سمیت کم سے کم بیس افراد کو حراست میں لے لیا۔

النجاح نیشنل یونیورسٹی کے حکام نے پیر کے روز اطلاع دی ہے کہ ایک اسرائیلی فوج نے نابلس شہر میں واقع یونیورسٹی پر دھاوا بول دیا۔ اس یونیورسٹی میں کم سے کم احتجاج کرنے والے 20 طلباء کو گرفتار کر لیا گیا۔

دریں اثنا یونیورسٹی برائے کمیونٹی افیئرز کے نائب صدر ڈاکٹر رائد الدبعی نے انکشاف کیا کہ سینکڑوں فوجیوں نے طوفانی کارروائی میں حصہ لیا۔ یونیورسٹی کی راہداریوں توڑپھوڑ کی اور اس کے 20 طلباء کو گرفتار کر لیا۔

عرب عالمی خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق اسرائیلی فوجیوں نے یونیورسٹی کے متعدد سکیورٹی گارڈز کو بھی حراست میں لے لیا۔

انہوں نےبتایا کہ اسرائیلی فورسز کے حملے کے نتیجے میں متعدد سکیورٹی گارڈز زخمی بھی ہوئے۔

مغربی کنارے میں اسرائیلی افواج
مغربی کنارے میں اسرائیلی افواج

النجاح یونیورسٹی نے ایک بیان میں کہا کہ یونیورسٹی پر چھاپہ فلسطینی قومی، تعلیمی، صحت کے اداروں اور مذہبی اداروں پر اسرائیل کے بار بار ہونے والے حملوں کا تسلسل ہے۔

دوسری جانب فلسطینی اسیران کلب کے تازہ ترین اعدادوشمار کے مطابق گذشتہ اکتوبر سے اسرائیلی فورسز کے ہاتھوں حراست میں لیے گئے فلسطینیوں کی تعداد تقریباً 5,875 تک پہنچ گئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں