ایران کی طرف سے حوثیوں کو بھیجے گئےاسلحے کو قبضے میں لینے کا امریکی دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی سینٹرل کمانڈ نے منگل کو ایک بیان میں کہا ہے کہ اس نے گیارہ جنوری کو جدید ایرانی روایتی ہتھیاروں کی ایک کھیپ قبضے میں لی ہے جنہیں ایران کی طرف سے یمن کے حوثیوں کو بھیجا گیا تھا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ نومبر میں تجارتی بحری جہازوں پر حوثیوں کے حملوں کے آغاز کے بعد سے یہ حوثیوں کو "ایران کی طرف سے فراہم کیے گئے جدید مہلک روایتی ہتھیاروں" کی پہلی ضبطی ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ ہے کہ ہم نے بحیرہ عرب میں صومالیہ کے ساحل کے قریب سے جو ایرانی ہتھیار پکڑے ہیں ان میں درمیانے فاصلے تک مار کرنے والے بیلسٹک میزائل اور اینٹی شپ کروز میزائل کے پرزے شامل ہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ "ابتدائی تجزیے سے ظاہر ہوتا ہے کہ حوثیوں نے اسی طرح کے ہتھیاربحیرہ احمر میں بحری جہازوں پر حملوں میں استعمال کیے تھے‘‘۔ْ

حالیہ مغربی حملوں کے بعد دھمکیوں کے باوجود یمن میں حوثی گروپ نے اعلان کیا کہ وہ بحیرہ احمر میں اپنے حملے جاری رکھے گا۔

حوثیوں کے چیف مذاکرات کار محمد عبدالسلام نے سوموار کہا کہ امریکی قیادت میں حملوں کے بعد ان کی جماعت کے موقف میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے۔ انہوں نے اشارہ دیا کہ اسرائیل جانے والے بحری جہازوں پر حملے جاری رہیں گے۔

جمعہ 12 جنوری کی صبح امریکی اور برطانوی افواج نے دارالحکومت صنعا اور الحدیدہ، تعز، حجہ اور صعدہ گورنریوں میں حوثیوں کے متعدد فوجی ٹھکانوں پر درجنوں حملے کیے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں