اسرائیل اشدود بندرگاہ کے ذریعے غزہ کے لیے آٹے کی ترسیل کی اجازت دے گا: امریکا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

صدر جو بائیڈن اور وزیرِ اعظم بنجمن نیتن یاہو کی بات چیت کے بعد جمعہ کو وائٹ ہاؤس نے کہا کہ اسرائیل غزہ کے شمال میں واقع اسرائیلی بندرگاہ اشدود کے ذریعے فلسطینیوں کے لیے آٹے کی کھیپ بھیجے گا۔

7 اکتوبر کو حماس کے اسرائیل پر حملوں کے بعد سے محصور غزہ کے لیے اقوام متحدہ نے اسرائیل سے انسانی امداد کی فوری ترسیل کے لیے بندرگاہ تک رسائی کی اجازت دینے کا مطالبہ کیا تھا جس کے چند دن بعد یہ اقدام سامنے آیا ہے۔

وائٹ ہاؤس نے ان کی کال کے ایک تحریری بیان میں کہا، "صدر نے فلسطینی عوام کے لیے اشدود بندرگاہ کے ذریعے براہ راست آٹے کی کھیپ کی اجازت دینے کے اسرائیلی حکومت کے فیصلے کا خیر مقدم کیا۔"

اس میں مزید کہا گیا، امریکی ٹیمیں "غزہ میں امداد کی مزید براہِ راست سمندری ترسیل کے لیے الگ الگ آپشنز پر کام" کریں گی۔

واشنگٹن نے 7 اکتوبر کو حماس کے حملوں کے بعد سے غزہ کے خلاف اسرائیلی جارحیت کی حمایت کی ہے جبکہ اسرائیلیوں سے فلسطینی شہریوں کو مزید امداد دینے کا مطالبہ بھی کیا ہے۔

اقوامِ متحدہ کی تین ایجنسیوں -- عالمی غذائی پروگرام (ڈبلیو ایف پی)، یونیسیف اور عالمی ادارۂ صحت -- نے پیر کو ایک مشترکہ بیان میں اشدود بندرگاہ کھولنے پر زور دیا۔

انہوں نے "غزہ میں انسانی امداد کی روانی میں ایک بنیادی قدم کی تبدیلی" کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا، "غزہ کی سرحد سے تقریباً 25 میل (40 کلومیٹر) شمال میں واقع اشدود کے استعمال کی "امدادی ایجنسیوں کو شدید ضرورت ہے۔"

اسرائیل اور حماس کی جنگ غزہ کے 2.4 ملین لوگوں کے لیے ایک انسانی تباہی کا سبب بنی ہے جو خوراک، پانی، ایندھن اور طبی امداد حاصل کرنے کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں۔

شرقِ اوسط کے لیے ڈبلیو ایف پی کی علاقائی ڈائریکٹر کورین فلیشر نے اس ماہ کے شروع میں اے ایف پی کو بتایا تھا کہ اشدود بندرگاہ کو کھولنے سے شمال سے غزہ کے باشندوں کو خوراک پہنچانے میں صرف ہونے والے وقت میں کمی آئے گی۔

دسمبر میں اسرائیل نے اپنی جنوبی کرم شالم سرحدی گذرگاہ کے ذریعے غزہ میں امداد کی عارضی ترسیل کی منظوری دے دی جس سے ہفتوں کے دباؤ کے بعد سپلائی کے لیے ایک نیا راستہ کھل گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں