غزہ میں جنگ بندی پر فلسطینی وزیر اور یو این میں اسرائیلی مندوب کے درمیان جھڑپ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ کے اجلاس میں غزہ کے معاملے پر فلسطینی وزیر خارجہ اور اسرائیلی سفیر کے درمیان تکرار ہو گئی۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق فلسطینی وزیر خارجہ ریاض المالکی اور عالمی ادارے میں اسرائیل کے سفیر گیلاد اردان کے درمیان اقوام متحدہ کے اجلاس کے دوران غزہ میں سیز فائر کے معاملے پر تکرار ہوئی جس دوران اسرائیلی سفیر نے ایران کے معاملے بھی انگلی اٹھائی۔

اجلاس میں فلسطینی وزیر خارجہ نے کہا کہ اب آگے صرف دو ہی راستے ہیں جن میں ایک یہ ہے کہ فلسطینیوں کی آزادی کا آغاز کریں جس سے خطے میں امن اور استحکام آئے جب کہ دوسرا راستہ یہ ہے کہ مسلسل اس آزادی سے انکار کیا جائے، خطے پر قیامت ڈھائی جائے اور نہ ختم ہونے والا خونریز تصادم جاری رہے۔

انہوں نے کہا کہ اسرائیل کو زیادہ دیر تک اس فریب میں نہیں رہنا چاہیے کہ کسی نہ کسی طرح اس کا تیسرا راستہ نکلے جس میں وہ غزہ پر قبضے کے ساتھ وہاں اپنی استعماریت اور نسلی عصبیت کو جاری رکھ سکے، یہ کسی طور قانونی اور پائیدار راستہ نہیں ہے۔

تاہم اس دوران اقوام متحدہ کے جنرل سیکرٹری انتونیو گوتریس نے فوری طور پر غزہ میں یرغمال بنائے گئے افراد کی غیر مشروط رہائی کا مطالبہ کیا۔

واضح رہے کہ اسرائیلی فوج نے تصدیق کی کہ غزہ میں سات اکتوبر سے جاری لڑائی میں گذشتہ روز اسے بڑا جانی نقصان اٹھانا پڑا جس میں حماس کے حملے میں اس کے 21 فوجی مارے گئے۔

اسرائیل کے غزہ میں جاری وحشیانہ حملوں میں اب تک 25 ہزار سے زائد فلسطینی جاں بحق ہو چکے ہیں جن میں 70 فیصد بچے اور خواتین شامل ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں