فلسطین اسرائیل تنازع

’جنگ بند کرو‘ غزہ میں ہلاک اسرائیلی فوجی کا بھائی پھٹ پڑا،گینٹز پر حملے کی کوشش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

غزہ کی پٹی میں اسرائیلی فوج اور حماس کی جنگ میں اسرائیلی فوج کو پہنچنے والے بھاری جانی نقصان پر اسرائیلی عوامی حلقوں میں بے چینی بڑھتی جا رہی ہے۔

ایک تازہ ویڈیو میں غزہ میں المغازی میں ہلاک ہونے والے ایک اسرائیلی فوجی کے بھائی نے جنگی کونسل کے رکن بینی گینٹز پر اس وقت حملے کی کوشش کی جب وہ کارئی شمرون بستی کے ایک قبرستان میں ہلاک فوجیوں کی تدفین کے موقعے پرموجود تھے۔

ویڈیو فوٹیج میں وہ لمحہ دکھایا گیا ہے جب غزہ کی لڑائیوں میں ہلاک ہونے والے اسرائیلی فوجیوں میں سے ایک کے بھائی نے اسرائیلی جنگی کونسل کے وزیر بینی گینٹز پر کارنئی شمرون بستی میں بھائی کے جنازے کے دوران حملہ کرنے کی کوشش کی۔

اسرائیلی میڈیا نے اطلاع دی ہے کہ حملہ آور 35 سالہ میجر ایڈم باسموت کا بھائی ہے۔ میجر ایڈم حماس کے عسکری ونگ عزالدین القسام بریگیڈز کی طرف سے المغازی کے مقام پر کیےگئے ایک حملے میں مارا گیا تھا۔

فوجی کے بھائی نے جنازے کے آغاز میں گینٹز پر چیختے ہوئے کہا کہ "تمہیں جنگ ختم کرنا ہوگی۔ میرا بھائی کسی وجہ سے نہیں مرا۔ یہ تمہاری چھیڑی گئی جنگ کا ایندھن بنا ہے"۔ اس پرگینٹز خاموش دکھائی دیے۔ تاہم سکیورٹی اہلکاروں نے مشتعل اسرائیلی نوجوان کو قابو کرنے اور بینی گینٹز سے دور رکھنے کی کی کوشش کی۔

خیال رہے کہ دو روز قبل غزہ کے المغازی محلے میں فلسطینی عسکریت پسندوں کے ایک پیچیدہ حملے میں اسرائیلی فوج کے انجینیرنگ یونٹ کے 21 اہلکار ہلاک ہوگئے تھے۔ اسرائیلی فوج کا کہنا ہے کہ یہ ہلاکتیں اس وقت ہوئی جب فوجی غزہ میں ایک بفرزون کے قیام کے لیے جگہ بنا رہے تھے کہ انہیں دو گھروں کے اندر بچھائی گئی بارودی سرنگوں سے نشانہ بنایا گیا۔

القسام کے ارکان یونٹ کے ارکان کو ایک شیل سے نشانہ بنانے میں کامیاب رہے جس نے دونوں مکانات کو منہدم کردیا۔ یہ شیل اسرائیلی فوج کی حفاظت کے لیے کھڑے کیے گئے ایک ٹینک پر داغا گیا جس کے نتیجے میں ٹینک تباہ ہوگیا۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان ایڈمرل دانیال ہاگری نے تل ابیب میں صحافیوں کو بتایا کہ عسکریت پسندوں کے گولے ایک عمارت کو لگے جس میں اسرائیلی فورسز نے دھماکہ خیز مواد رکھا تھا۔ انہوں نے مزید کہا کہ حملے کے نتیجے میں عمارت اور اس کے ساتھ والی ایک عمارت منہدم ہو گئی۔

اسرائیلی براڈکاسٹنگ کارپوریشن نے بتایا کہ 7 اکتوبر کو غزہ میں جنگ شروع ہونے کے بعد سے فوجیوں کی ہلاکتوں کی تعداد 546 ہو گئی ہے۔

اسرائیلی جنگی کونسل کے وزیر بینی گینٹز نے بدھ کے روز کہا تھا کہ ان کے ملک کی ہنگامی حکومت غزہ کی پٹی میں حماس کے زیر حراست افراد کی واپسی کے لیے "مشکل فیصلے" کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہم ماضی میں بھی مشکل فیصلے کرچکے ہیں۔اب بھی اگرکوئی ٹھوس ڈیل ہوتی ہے تو ہم قیدیوں کی رہائی کےلیے مشکل فیصلوں کے لیے تیار ہیں۔

گینٹز نے غزہ کی پٹی میں حماس کے زیر حراست افراد کی واپسی کے لیے "مشکل فیصلے" کرنے کے امکان کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ "میں مغویوں کے اہل خانہ اور پوری عوام سے وعدہ کرتا ہوں کہ جس طرح ہم ماضی میں مشکل فیصلے کرنا جانتے تھے۔ ہم مستقبل میں فیصلہ کرنے کا طریقہ اپنا لیں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں