اسرائیلی مندوب ’یو این‘ سیکرٹری جنرل پر برس پڑے‘ قتل اوردہشت گردی کی حمایت کا الزام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی ’اونروا‘ کے کچھ ملازمین کی 7 اکتوبرکو ہونے والے حملے ملوث ہونے کےالزامات کے بعد اقوام متحدہ میں اسرائیل کے مندوب گیلاد اردان نے تنظیم کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوتیریس کو ایک بار پھر تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔

اتوار کو ایک بیان میں اردان نے گوتیریس پراسرائیلیوں کے قتل کومنظم کرنے کی کوشش کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ "اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل نے ایک بار پھر ثابت کر دیا ہے کہ اسرائیل کے شہریوں کی جان اور حفاظت ان کے لیے کوئی اہمیت نہیں رکھتی"۔

انہوں نے کہا کہ کہا کہ "برسوں کے بعد جب اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل نے ’اونروا‘ اور اس کے اکسانے اور دہشت گردی میں ملوث ہونے کے بارے میں ذاتی طور پر پیش کیے گئے شواہد کو نظر انداز کیا۔ وہ’اونروا‘ میں حماس کے تمام دہشت گردوں اور قاتلوں کے مقام کا تعین کرنے کے لیے ایک جامع تحقیقات کرنے کے بجائے دہشت گردی کو منظم کرنے کے لیے چندہ جمع کرنے پر توجہ مرکوز کررہے ہیں‘‘۔

اردان نے مزید کہا کہ "جو بھی ملک ’اونروا‘ کو اس تنظیم کے بارے میں جامع تحقیقات کرنے سے پہلے فنڈز جاری رکھے گا، اسے یہ سمجھ لینا چاہیے کہ اس کے فنڈز دہشت گردی کے لیے استعمال کیے جائیں گے۔ ’اونروا‘ کو جو امداد منتقل کی جائے گی وہ غزہ کے رہائشیوں کے بجائے حماس کے دہشت گردوں تک پہنچ سکتی ہے‘‘۔

انہوں نے تمام عطیہ دہندگان سے ایجنسی کے لیے اپنی امداد منجمد کرنے کا مطالبہ کیا اور ایسی تحقیقات کا مطالبہ کیا جس میں تنظیم کے تمام ملازمین شامل ہوں۔

گوتیریس کا تحقیقات کا اعلان

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیوگوتیریس نے ایک بیان میں کہا ہے کہ وہ بین الاقوامی تنظیم کے کسی بھی ملازم کو "دہشت گردانہ کارروائیوں" میں ملوث ثابت ہونے پر سزا دیں گے۔

گوئیرس
گوئیرس

7 اکتوبر کے حملوں میں اونروا کے 12 ملازمین کے ملوث ہونے کے اسرائیلی الزامات کے بعد امریکا، برطانیہ، جرمنی، نیدرلینڈ، سوئٹزرلینڈ، فن لینڈ، آسٹریلیا اور کینیڈا نے تنظیم کی مالی امداد روک دی ہے۔

اسرائیلی حملے اور تنقید

قابل ذکر ہے کہ یہ پہلا موقع نہیں ہے کہ گوتیریس کو غزہ جنگ پر اپنے موقف کی وجہ سے اسرائیلی حملوں اور تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہو۔

گذشتہ 24ء اکتوبر کو اسرائیل نے اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل سے فوری طور پر مستعفی ہونے کا مطالبہ کیا تھا۔ وزیر خارجہ ایلی کوہن نے ان سے اس وقت ملاقات کرنے سے انکار کر دیا تھا جب انہوں نے کہا تھا کہ حماس کا حملہ زمین پر ہوا تھا کوئی خلاء سے نہیں ہوا۔

اونروا کا ایک قافلہ
اونروا کا ایک قافلہ

اسرائیلی مندوب نے 7 اکتوبر کو حماس کے حملے کے بعد سے ایک سے زیادہ مواقع پر اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل پر بھی تنقید کی اور ان پر الزام لگایا کہ وہ "اخلاقی طور پر کرپٹ اور اپنے عہدے کے نااہل ہیں کیونکہ وہ دہشت گردی کی مذمت نہیں کرتے"۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں