خان یونس میں اسرائیلی بمباری اور مسلسل محاصرے سے ہسپتالوں کا نظام تباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

جنوبی غزہ کے شہر خان یونس میں علاج معالجے کا سارا نظام تباہی سے دوچار ہو چکا ہے۔ جبکہ بچی کھچی اکا دکا طبی سہولیات بھی خطرات کی زد میں ہیں۔ اسرائیلی فوج نے ان دنوں اسی علاقے کو بمباری کے نشانے پر رکھا ہوا ہے۔

فلسطینی وزارت صحت نے متنبہ کیا ہے کہ غزہ کی پوری پٹی پر اسرائیل کی جارحانہ بمباری کی لپیٹ میں آ چکی ہے۔ اس لیے طبی سہولتیں اور ہسپتال بھی تباہی سے دوچار ہیں۔

خان یونس کے مقامی رہائشیوں کا کہنا ہے'اسرائیلی طیاروں اور ٹینکوں نے غزہ شہر کے شمال میں ان علاقوں پر بھی گولہ باری کی ہے، جن علاقوں کو سے پہلے اسرائیلی فوجیوں کو آہستہ آہستہ نکالنے کی بات کی تھی۔ اسی طرح بیت لاھیا اور جبالیا کے قصبوں کے اردگرد بھی بمباری کی آوازیں سنی جا رہی ہیں۔

دوسری جانب اسرائیلی فوج نے کہا ہے کہ 'خان یونس میں سخت لڑائی کا سامنا ہے۔ اسرائیلی فوج کا یہ بھی کہنا ہے کہ اس نے 'علاقے سے دہشت گردوں کا خاتمہ کر دیا ہے اور یہاں سے بھاری مقدار میں اسلحہ بھی برآمد کر لیا ہے۔ '

اطلاعات کے مطابق غزہ کی پٹی پر اسرائیلی فوج کی جنگجووں کے ساتھ پوری رات لڑائی جا رہی ہے۔ حماس کے عسکری ونگ القسام پریگیڈ نے اس لڑائی کے دوران اسرائیلی فوج کے دو ٹینک تباہ کیے ہیں۔

اسرائیلی فوج کی غزہ میں تازہ ترین لڑائی اس وقت سامنے آئی جب اقوام متحدہ کے ذیلی ادارے 'اونروا' کے لیے امریکہ اور اس کے کئی اتحادی ملکوں نے فنڈز کی فراہمی روک دی ہے۔ جبکہ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل نے فنڈز کی فراہمی جاری رکھنے پر زور دیا ہے۔

غزہ میں فلسطینی وزارت صحت کے مطابق غزہ کے مضافاتی علاقے میں اسرائیلی بمباری سے ایک ہی گھر میں آٹھ فلسطینی ہلاک ہو گئے ہیں۔

واضح رہے اسرائیلی جنگ سات اکتوبر سے غزہ میں جاری ہے۔ اس کے نتیجے میں اب تک 26400 سے زائد فلسطینی ہلاک ہو چکے ہیں۔

فلسطینی طبی ماہرین اور مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ خان یونس کے دو ہسپتالوں کے اردگرد کے علاقوں میں بمباری کا سلسلہ جاری ہے۔ اسرائیلی بمباری کی وجہ سے امدادی ٹیموں کو ان بے گھر لوگوں کی مدد دینے میں بھی سخت مشکلات آرہی ہیں۔

ترجمان وزارت صحت اشرف القدرہ نے کہا 'ناصر ہسپتال اور الامال ہسپتال میں طبی نظام مکمل طور پر تباہی سے دوچار ہے۔ '

اسرائیل کا دعویٰ ہے کہ 'شہری ہلاکتوں کے بچاؤ کے لیے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔ لیکن حماس پر الزام لگایا جاتا ہے کہ یہ جان بوجھ کر گنجان آبادیوں کو اپنے لیے انسانی ڈھال کے طور پر استعمال کرنے کے لیے استعمال کرتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں