منصب کے ناجائزاستعمال اور منی لانڈرنگ کے الزام میں العلاء رائل کمیشن کے سربراہ برطرف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

گذشتہ روز سعودی عرب کےانسداد بدعنوانی کے نگران ادارے نے العلا گورنری کے رائل کمیشن کے ’سی ای او‘ عمرو بن صالح عبدالرحمن المدنی کی معطلی کا اعلان کیا تاہم اب اس کیس کی مزید تفصیلات سامنے آئی ہیں۔ ان تفصیلات سے معلوم ہواہے کہ برطرف عہدیدار پر اپنے سرکاری منصب اور اختیارات کا ناجائز استعمال کرنے کے ساتھ ساتھ منی لانڈرنگ کے الزامات بھی شامل ہیں۔

شاہی کمیشن برائے العلا گورنری کے برطرف سی ای او عمروبن صالح المدنی نے نیشنل ٹیلنٹ کمپنی کے فائدے کے لیے شاہ عبداللہ سٹی برائے جوہری اور قابل تجدید توانائی سے غیر قانونی طریقے سے ٹھیکے حاصل کیے تھے۔

انہوں نے سرکاری ملازمت سے قبل یہ ٹھیکے اپنے ایک قریبی عزیز کی مدد سے حاصل کئے جن کی کل مالیت 206,630,905 ریال تھی۔

رائل کمیشن کے ایک ذمہ دار نے بتایا کہ سرکاری منصب سنھبالنے کے بعد المدنی نے بہ ظاہرکمپنی کی ملکیت ترک کردی مگرعملاً انہوں نے کمپنی کی ملکیت برقرار رکھی۔ انہوں نے رائل کمیشن فار العلا گورنری کے ذمہ دار محکموں کو اس کمپنی کو ٹھیکےدلانے کی سفارش کی اور مجموعی طور پر انہوں نے بارہ لاکھ، 98ہزار 923 ریال کی رقم کی گرانٹ حاصل کی۔

قریبی عزیز کے ذریعے منافع خوری

انہوں نے مزید کہا کہ المدنی نے اتھارٹی کے ساتھ معاہدہ کرنے والی کمپنیوں سے ذاتی فواید حاصل کیے اور ان منصوبوں سے اپنے ایک رشتہ دار شہری محمد بن سلیمان محمد الحربی کے ذریعے منافع حاصل کیا۔ المدنی کے اس رشتہ دار الحربی کو بھی گرفتار کرلیا گیا ہے۔اس نےاعتراف کیا کہ وہ المدنی طرف سے کمپنی کے لیے کام کرتا رہا ہے۔

ذریعے نے مزید کہا کہ کمپنی میں میرے مذکورہ شراکت دار شہری سعید بن عاطف احمد سعید اور جمال بن خالد عبداللہ الدبل جنہیں معطل کر دیا گیا تھا۔ انہوں نےاعتراف کیا کہ وہ العلاء گورنری کے رائل کمیشن کے سابق سربراہ کے ساتھ معاہدوں کے بارے میں معلومات رکھتے تھے۔

انہوں نے کہا کہ مذکورہ ملزمان کے خلاف قانونی کارروائی ضابطے اور ہدایات کے مطابق مکمل کی جا رہی ہے،اس کے بعد انہیں عدلیہ کے حوالے کیا جائے گا۔

انسداد بدعنوانی کمیشن کا کہنا ہے کہ وہ مملکت کے تمام اداروں میں کسی بھی بدعنوانی کی کوشش پر کڑی نظر رکھے ہوئے ہے اور اس حوالے سے فوری تحقیقات کا عزم کیا گیا ہے۔ کمیشن کا کہنا ہے کہ کسی کو عوامی اور سرکاری ملاک کو نقصان پہنچانے کی اجازت نہیں دی جائےگی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں