فلسطین اسرائیل تنازع

اسرائیل کا رفح پر حملہ، خان یونس میں ملبے سے ایک خاندان کے 12 افراد کی لاشیں برآمد

خان یونس پر شدید حملے جاری اور بمباری سے 24 گھنٹوں میں 105 فلسطینی ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج نے جمعہ کی صبح غزہ کی پٹی کے جنوب میں واقع شہر رفح کے مشرقی علاقوں پر فضائی حملے شروع کیے۔

جبکہ غزہ میں وزارت صحت نے جمعہ کے روز اعلان کیا کہ شراب نامی خاندان کے 12 شہداء کی لاشیں ان کے گھر کے ملبے کے نیچے سے ملی ہیں، جنہیں اسرائیلی فوج نے ہفتے قبل خان یونس کا مرکز میں السکہ کے علاقے میں بمباری کا نشانہ بنایا تھا۔

اسرائیلی فوج مصر کی سرحد کے قریب جنوبی غزہ کی پٹی کے علاقے خان یونس سے رفح میں اپنی فوجی کارروائیوں کو منتقل کرنے کی تیاری کر رہی ہے۔ جب کہ مصرکے ساتھ اسرائیل کے " فلاڈلفیا سرحدی محور" پر قبضہ کرنے کے منصوبے پر بحث بڑھ رہی ہے۔

ادھر غزہ کی پٹی میں فلسطینی وزارت صحت نے جمعے کے روز بتایا کہ گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران مختلف علاقوں میں مسلسل اسرائیلی چھاپوں کے نتیجے میں 105 فلسطینی جاں بحق ہوئے، جن میں اکثریت بچوں، خواتین اور بزرگوں کی تھی۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسرائیلی فوج نے خان یونس میں واقع الامل اسپتال پر چھاپے اور دھاوا بولنا جاری رکھا ہوا ہے اور ناصر اسپتال کا محاصرہ کر رکھا ہے۔ اس کی فورسز نے طبی عملے، زخمیوں، بیماروں اور ہزاروں بے گھر افراد کو نشانہ بناتے ہوئے بمباری جاری رکھی ہوئی ہے۔

وزارت صحت کے مطابق، غزہ کے یورپی ہسپتال کے ارد گرد بمباری کی کارروائیوں کے نتیجے میں متعدد ہلاکتیں ہوئیں۔

وزارت نے تصدیق کی کہ اسرائیلی فوج نے خان یونس کے مرکز اور مغرب میں، بنی سہیلہ، عبسان ، مناطق معن، البطن السمین، النسماوی کے علاقوں میں درجنوں چھاپے مارے اور بمباری کی۔

عینی شاہدین نے بتایا کہ قابض فوج نے خان یونس میں طیبہ ٹاورز کے محلے پر بمباری کی اور شہر کے وسط اور مغرب میں بھی گولہ باری کی۔

فلسطینی دھڑوں اور اسرائیلی فوج کے درمیان جھڑپیں ہوئیں اور شہر اور غزہ کے علاقوں تل الحوی اور الزیتون میں دھماکوں اور فائرنگ کے تبادلے کی آوازیں سنی گئیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں