زنجیروں میں جکڑا ،برہنہ قیدی :سوشل میڈیا پراسرائیلی فوجی کی تصویر نےطوفان برپا کردیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

" ذلت آمیز منظر... بنیادی انسانی حقوق کی خلاف ورزی۔"یہ غزہ کی پٹی میں ایک فلسطینی قیدی کی تصویر پر کیے گئے تبصرے ہیں۔ اس تصویر کو ایک اسرائیلی فوجی نے گذشتہ روز اپنے فیس بک اور انسٹاگرام اکاؤنٹس پر پوسٹ کیا تھا۔

گذشتہ چند گھنٹوں کے دوران بہت سے سوشل میڈیا صارفین نے اس تصویر کو دیکھ کر غم و غصے کا اظہار کرتے ہوئے اس پر تنقید کی ، اسے غیر انسانی اور شرمناک قرار دیا۔


عارضی طور پر بند

متعدد صارفین نے اسرائیلی فوجی یوسی گامزو کے اکاؤنٹ کے خلاف شدید مہم چلائی، اور فیس بک پر تنقید کی ۔ یہ پیج بعد میں عوام کے لیے بند کردیا گیا۔

العربیہ کے ذریعے نے اس کے اکاؤنٹ تک رسائی حاصل کرنے کی کوشش کی تو معلوم ہوا کہ اسے عارضی طور پر بند کر دیا گیا تھا، چونکہ تصویر نے فیس بک کے قوانین کی خلاف ورزی کی تھی۔

7 اکتوبر کو غزہ کی پٹی میں جنگ شروع ہونے کے بعد، اور خاص طور پر محصور فلسطینی پٹی پر اسرائیلی زمینی حملے کے آغاز کے بعد، بہت سی ویڈیوز پھیل چکی ہیں جنہیں اسرائیلی فوجیوں کی جانب سے اشتعال انگیز عمل قرار دیا گیا ہے۔

ان میں سے بعض نے تباہی کے مناظرکو فلمایا، جب کہ دوسروں نے بڑے فخر سے گھروں اور شہریوں کے گھروں پر بمباری کو دکھایا۔

متعدد فوجیوں نے پوسٹ کیا کہ وہ فلسطینیوں کے گھروں میں داخل ہوئے اور بیڈ رومز، یہاں تک کہ الماریوں کے اندر موجود چیزوں کا بھی مذاق اڑاتے ہوئے جائزہ لیا۔

ان "اشتعال انگیز" اقدامات نے سوشل میڈیا اور اسرائیل کے اندر بھی تنقید کو جنم دیا، جس نے فوج کو یہ اعلان کرنے پر مجبور کیا کہ اس نے اپنے فوجیوں کے ان اقدامات کی تحقیقات شروع کر دی ہیں۔

تاہم، ابھی تک ان تحقیقات کے نتائج کے بارے میں کچھ معلوم نہیں ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں