غزہ میں اسرائیلی کامیابی حماس، ایران نواز تنظیموں کے لئے دھچکا ہو گی: نیتن یاہو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو نے غزہ میں جاری اسرائیل کی طویل ترین جنگ کے چارماہ مکمل ہونے کے قریب کہا ہے کہ اسرائیل کی فتح حماس اور خطے میں پھیلے اس کے اتحادیوں کے لیے ایک بڑے مہلک دھچکے کا سبب بنے گی۔

نیتن یاہو کے دفتر سے جاری کیے گئے بیان میں دعویٰ کیا کہ اسرائیل کو جامع کامیابی ملنا ایران کی حامی تنظیموں حزب اللہ، حوثیوں اور حماس کے لیے ایک بڑا دھچکہ ہو گی۔ وہ اسرائیلی فوج کاحوصلہ بڑھانے کی کوشش کے طور پر فوجی کمانڈروں سے خطاب کر رہے تھے۔

اسرائیلی وزیر اعظم نے اپنے فوجی کمانڈروں کے سامنے یہ صورت حال ایسے وقت میں رکھی ہے جب فرانس کے وزیر خارجہ اسرائیل میں موجود تھے اور امریکی وزیر خارجہ اسرائیل پپہنچنے والے ہیں۔ امریکی وزیر خارجہ کا سات اکتوبر سے اب تک یہ پانچواں دورہ سمجھا جائے گا۔

انہوں نے فوجی کمانڈروں کو خبر دار کیا' اگر ہم کامیاب نہ ہو سکے تو یہ ناکامی اسرائیلی سلامتی کے لیے بہت بڑا خطرہ بن جائے گی۔۔ انہوں نے کمانڈروں پرمزید زور دیتے ہوئے کہا اگر ہمیں کامیابی نہ مل سکی تو بے گھر ہونے والے اسرائیلی بھی اپنے گھروں کو واپس نہیں آسکیں گے۔'

اسرائیلی وزیر اعظم نے اپنی فوج کے حکام سے کہا 'اس لیے بھی کامیابی حاصل کرنا ضروری ہے کہ اگر ہم ناکام ہو گئے تو ہمارے لوگوں کا نیا قتل عام زیادہ دور نہیں ہو گا۔ اس صورت حال کو ایران ، حزب اللہ اور دوسرے گروپ جشن کے طور پر منائیں گے۔ '

نیتن یاہو نے اپنے کمانڈروں کو جنگ پر قائل کرتے ہوئے کہا ' حوثی اسرائیل مخالف اور مغرب مخالف مزاحمت کا حصہ ہیں۔ اس حوثی گروپ نے کئی ماہ سے بحیرہ احمر میں خوف کی فضا پیدا کر رکھی ہے۔ جہاز رانی خطرے میں ہے۔ اسی کے جواب میں امریکہ اور برطانیہ نے جوابی حملے کیے ہیں۔'

واضح رہے یہ یمنی حوثی اپنے حملوں کو غزہ میں چار کی جنگ کا رد عمل قرار دیتے ہیں جس میں اسرائیل کی بمباری سے اب تک ساڑھے ستائیس ہزار سے زائد فلسطینی ہلاک ہو چکے ہیں۔ جن میں غالب اکثیریت فلسطینی عورتوں اور بچوں کی ہے۔ تاہم فلسطینی نسل کشی کے حوالے سے بین الاقوامی عدالت انصاف کے فیصلے کے بعد اسرائیلی فوجی کمانڈروں کے لیے سوچنے کا ایک نیا موقع پیدا ہو گیا ہے۔

دوسری جانب اسرائیل کو پچھلے چار ماہ سے لبنانی سرحد سے حزب اللہ کے ساتھ بھی لڑنا پڑ رہا ہے۔ اسرائیلی فوج کے مطابق پیر کے روز بھی لبنان کی طرف سے کئی راکٹ شمالی اسرائیل میں داغے گئے ہیں۔ بیان کے مطابق اسرائیلی فوج نے بھی لبنان کے علاقے کو نشانہ بنایا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں