دمشق کے اطراف میں اسرائیلی بمباری سے ہلاکتوں کی اطلاعات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شام کے سرکاری میڈیا نے اطلاع دی ہے کہ فضائی دفاع نے جمعے کے روز دمشق کے نواح میں "دشمن اہداف" کا جواب دیتےہوئے متعدد میزائل مار گرائے۔

سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس نے کہا کہ اسرائیلی حملوں میں دمشق میں سیدہ زینب کے علاقے کو نشانہ بنایا گیا۔

آبزرویٹری نے کہا کہ دمشق کے مضافاتی علاقے میں اسرائیلیوں کی جانب سے ایک مکان کو نشانہ بنانے کی وجہ سے ہلاکتیں ہوئیں۔ آبزرویٹری نے اس بات کی بھی تصدیق کی کہ اسرائیل نے دمشق کے دیہی علاقوں میں مزہ ملٹری ایئرپورٹ کو نشانہ بنایا۔

العربیہ اور الحدث ٹی وی کے ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ "اسرائیل نے شام میں بمباری کی تردید کی ہے"۔

ایک اور تناظر میں سرکاری خبر رساں ایجنسی سانا نے بتایا کہ مقبوضہ گولان سے شام کی فضائی حدود میں داخل ہونے والے دو ڈرونز کو مار گرایا گیا ہے۔

قبل ازیں بدھ کے روزانسانی حقوق آبزرویٹری کے مطابق بدھ کے روز وسطی شام کے علاقے حص پر اسرائیلی بمباری میں لبنانی حزب اللہ کے دو جنگجوؤں سمیت 11 عام شہری شامل تھے۔ ہلاک ہونے والوں میں سات عام شہری تھے۔

گذشتہ برسوں کے دوران اسرائیل نے شام میں سیکڑوں فضائی حملے کیے، جن میں بنیادی طور پرایرانی اور حزب اللہ کے اہداف کو نشانہ بنایا جاتا رہا ہے۔ ان حملوں میں ہتھیاروں اور گولہ بارود کے گوداموں اور سامان کی ترسیل کے ساتھ ساتھ شامی فوج کے کیمپوں کوبھی نشانہ بنایا گیا۔

گذشتہ برس 7 اکتوبر کو حماس کی طرف سے اسرائیل پر کیے گئے ایک غیر معمولی حملے کے بعد غزہ میں جنگ شروع ہونے کے بعد ان حملوں میں شدت آئی۔

اسرائیل شاذ و نادر ہی ان حملوں کا اعتراف کرتا ہے لیکن ساتھ ہی تل ابیب کا کہنا ہے کہ وہ شام اور لبنان سمیت اپنے پڑوسی ملکوں میں ایران کو اپنے پاؤں جمانے کی اجازت نہیں دے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں