غزہ میں جنگ، معاشی و سیاسی عدم استحکام کے باعث اسرائیلی کریڈٹ ریٹنگ گرگئی: موڈیز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

امریکی کریڈٹ ریٹنگ ایجنسی 'موڈیز' کی جاری کردہ رپورٹ میں اسرائیلی 'کریڈٹ ریٹنگ' میں کمی آگئی ہے۔ جمعہ کو شائع ہونے والی رپورٹ میں اسرائیلی 'کریڈٹ ریٹنگ' میں کمی کا سبب غزہ میں جاری اسرائیلی جنگ کو بتایا گیا ہے۔

یہ رپورٹ غزہ جنگ کے چار ماہ مکمل ہونے کے بعد سامنے آئی ہے۔ واضح رہے اس سے پہلے ماہ اکتوبر میں موڈیز نے اسرائیل کی 'کریڈٹ ریٹنگ' 'اے ون' رکھی تھی۔ جنگ کے چار ماہ مکمل ہونے کے بعد اب اسرائیل کی 'کریڈٹ ریٹنگ' 'اے ٹو' پر آگئی ہے۔

'موڈیز' کے مطابق اسرائیلی 'کریڈٹ ریٹنگ' میں کمی غزہ میں جاری اسرائیلی جنگ کے باعث آئی ہے۔ جنگ کے باعث اسرائیل کی معاشی و سیاسی صورتحال میں عدم استحکام کا سامنا ہے۔

نیتن یاہو حکومت کی طرف سے حماس کے خاتمے کا عزم بار ہا ظاہر کیا جا رہا ہے۔ وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو کا کہنا ہے کہ حماس کے خاتمے تک جنگ جاری رہے گی۔

امریکی انٹیلیجنس اداروں کا کہنا ہے کہ حماس کے خاتمے کے ہدف سے اسرائیل بہت دور ہے۔ خیال رہے اسرائیل نے اپنے طور پر بھی اپنے لوگوں کو عندیہ دیا ہے کہ اس سال بھی جنگ جاری رہ سکتی ہے۔

واضح رہے اسرائیل میں سیاسی عدم استحکام کی علامات پچھلے کئی عرصے سے سامنے آنا شروع ہو چکی ہیں کہ نیتین یاہو حکومت کے خاتمہ کا مطالبہ بھی شروع ہوچکا ہے۔ عوامی سطح پر نیتن یاہو حکومت کی مقبولیت گرنے لگی ہے۔

اسرائیل میں قائم مخلوط حکومت کے اتحادیوں کی غزہ میں جاری جنگ سے متعلق نقطہ نظر میں بھی واضح طور پر اختلاف پیدا ہونا شروع ہوگیا ہے۔ یہاں تک کہ وزارت دفاع اور وزیراعظم کے درمیان بھی اختلافات شروع ہو چکے ہیں۔

'موڈیز' کا کہنا ہے کہ اسرائیل کے پاس سیکورٹی کی بحالی و مضبوطی سے متعلق کوئی پلان نہیں ہے۔ سیکورٹی کا کمزور ہونا سماجی خطرات سے دوچار کرتا ہے۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ توقع کی جارہی ہے کہ اسرائیلی قرضوں کا بوجھ جنگ کے آغاز سے پہلے کے مقابلے میں زیادہ ہوگا۔

مقبول خبریں اہم خبریں