رمضان کے لیے رضاکارانہ خدمات: متحدہ عرب امارات میں اہلیت کے رہنما اصول اور سزائیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

رمضان کے مقدس مہینے کے ساتھ ہی دنیا بھر کے مسلمان عبادت کے طور پر خیراتی کاموں اور ضرورت مندوں کی مدد کرنے میں کافی سرگرمی سے مشغول ہو جاتے ہیں۔

متحدہ عرب امارات میں رمضان شروع سے پہلے کے ہفتوں میں رضاکارانہ سرگرمیاں عروج پر ہوتی ہیں جس میں امارات بھر میں کئی اقدامات کیے جاتے ہیں۔ شہریوں اور غیر ملکیوں کو یکساں طور پر مختلف خیراتی پروگراموں میں رضاکارانہ طور پر کام کرنے کا موقع ملتا ہے۔

البتہ اس کی اہلیت کے کچھ رہنما خطوط اور فرائض ہیں جن پر رضاکاروں کو کسی بھی سزا یا بھاری جرمانے سے بچنے کے لیے لازمی عمل کرنا چاہیے۔

رضاکار بننے کے تقاضے

ایک اماراتی شہری یا متحدہ عرب امارات کا رہائشی ہونا ضروری ہے۔

ایک رضاکار کی عمر کم از کم 18 سال ہونی چاہیے۔ 18 سال سے کم عمر کے فرد کو کچھ تنظیموں کی پالیسیوں اور ان کے والدین کی رضامندی کے مطابق رضاکارانہ طور پر کام کرنے کی اجازت دی جا سکتی ہے۔

رضاکارانہ کام انجام دینے کے لیے فرد کو رجسٹرڈ ہونا چاہیے اور اس کے پاس لائسنس ہونا چاہیے۔

ایک رضاکار کو اچھے کردار اور اخلاق کا مظاہرہ کرنا چاہیے۔

انہیں تفویض کردہ رضاکارانہ کام کو انجام دینے کے لیے طبی طور پر فٹ ہونا چاہیے۔

سزاؤں/جرمانے کا لازمی خیال رکھیں

بغیر لائسنس کے متحدہ عرب امارات کے اندر یا باہر کسی بھی رضاکارانہ کام کو منظم کرنا ممنوع ہے۔ اس کی خلاف ورزی پر 2,722 ڈالر (10,000 درہم) سے لے کر 27,226 ڈالر (100,000 درہم) تک کے جرمانے ہو سکتے ہیں۔

ایک رضاکار کو 8,167 ڈالر (30,000درہم) تک جرمانہ کیا جا سکتا ہے اگر وہ رضاکارانہ سرگرمیاں انجام دینے کے دوران حاصل کردہ کسی خفیہ معلومات یا ڈیٹا کو ظاہر کرے۔

وزارت برائے کمیونٹی ڈویلپمنٹ کی رضامندی کے بغیر رضاکارانہ سرگرمیوں کے لیے فنڈز جمع کرنے پر کم از کم 13,613 ڈالر (50,000 درہم) جرمانہ ہو سکتا ہے۔

رضاکاروں کو اس مدت کے دوران اپنے مالی فائدے کے لیے کوئی سرگرمی نہیں کرنی چاہیے اور انہیں اپنے ذاتی ڈیٹا کو بار بار اپ ڈیٹ کرنا چاہیے اور اپنے کام کو معطل کرنے پر متعلقہ حکام کو مطلع کرنا چاہیے۔

مقبول خبریں اہم خبریں