فلسطین اسرائیل تنازع

نیتن یاہو کی رفح میں "طاقت ور" آپریشن کی دھمکی، مذاکرات سےفرار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے بدھ کی شام کو رفح میں ایک "طاقت ور"فوجی آپریشن کا عزم ظاہر کیا ہے جس کے بعد شہری آبادی کو محصور غزہ کی پٹی کے جنوبی سرے پر واقع شہر چھوڑنے کا کہا گیا ہے۔

دوسری جانب اسرائیلی وزیراعظم نے غزہ میں جنگ بندی کےحوالے سے مصر اورقطر کے ساتھ بات چیت کے لیے نمائندہ قاہرہ بھیجنے سے بھی انکار کردیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اسرائیل رفح میں حماس پر حملہ جاری رکھے گا۔ نیتن یاہو نے ٹیلی گرام میسجنگ ایپلی کیشن پر اپنے اکاؤنٹ پر کہا کہ "ہم مکمل فتح تک لڑیں گے اور اس میں رفح میں حماس کا خاتمہ بھی شامل ہے جب کہ ہم نے شہری آبادی کو جنگی علاقوں سے نکلنے کی اجازت دی ہے"۔

یہ بیانات ایسے وقت میں سامنے آئے ہیں جب بدھ کے روز قاہرہ میں اسرائیل اور حماس کے درمیان رفح شہر میں اسرائیل کی زمینی کارروائی کے خدشے کے درمیان جنگ بندی تک پہنچنے کے لیے مذاکرات جاری تھے۔

اقوام متحدہ کے مطابق اس شہر میں تقریباً 14 لاکھ لوگ جمع ہیں جن میں سے زیادہ تر جنگ کی وجہ سے بے گھر ہوئے تھے جو ایک بہت بڑے کیمپ میں تبدیل ہو چکا ہے اور یہ غزہ کی پٹی کا واحد بڑا شہر ہے جہاں اسرائیلی فوج ابھی تک زمینی حملہ نہیں کیا ہے۔

تاہم اسرائیلی فوج نے اتوار اور پیر کی درمیانی شب ایک آپریشن کیا، جس کے نتیجے میں اس نے دو اسرائیلی یرغمالیوں کو آزاد کرانے کا اعلان کیا، لیکن حماس حکام کے مطابق اسرائیلی بمباری میں فلسطینیوں کی جانب سے تقریباً 100 افراد مارے گئے۔

نیتن یاہو نے بدھ کی شام ایک ویڈیو کلپ میں مزید کہا کہ ’’اس ہفتے ہم نے اپنے دو مغویوں کو ایک درست فوجی آپریشن میں آزاد کرایا۔‘‘ اب تک ہم نے سخت فوجی دباؤ اور مضبوط مذاکرات کے ذریعے اپنے 112 مغویوں کو آزاد کرایا ہے۔

اسرائیلی وزیر اعظم نے کہا کہ "یہ ہمارے باقی ماندہ یرغمالیوں کو آزاد کرانے کی طرف اہم قدم ہے۔ مضبوط فوجی دباؤ اور بہت مضبوط مذاکرات ہمارا ہتھیار ہے۔ اس لحاظ سے میں اصرار کرتا ہوں کہ حماس اپنے خیالی مطالبات کو ترک کر دے، جب وہ اپنے مطالبات ترک کر دے گی، تو ہم آگے بڑھنے کے قابل ہو جائیں گے"۔

نیتن یاہو نے حماس کے مطالبات کے بارے میں تفصیلات فراہم نہیں کیں، لیکن فلسطینی تحریک کے اندر موجود ذرائع کے مطابق تحریک "مکمل جنگ بندی" کا مطالبہ کر رہی ہے، جب کہ اسرائیل 130 یرغمالیوں کی رہائی کے ساتھ لڑائی روکنے کی تجویز دے رہا ہے۔

اس تناظر میں نیتن یاہو کے دفتر نے اعلان کیا کہ قاہرہ میں ہونے والے مذاکرات کے دوران اسرائیل کو حماس تحریک کی طرف سے غزہ کی پٹی میں یرغمالیوں کی رہائی کے معاہدے کے حوالے سے کوئی نئی تجاویز موصول نہیں ہوئیں۔ نتن یاہو کے دفتر سے کہا گیا کہ "اسرائیل کو کوئی تجویز موصول نہیں ہوئی"۔

قبل ازیں اسرائیلی "واللا" ویب سائٹ نے باخبر ذرائع کے حوالے سے اطلاع دی تھی کہ نیتن یاہو نے یرغمالیوں کی رہائی کے معاہدے کی جانب آگے بڑھنے کے لیے مزید مشاورت میں شرکت کے لیے اسرائیلی وفد کو قاہرہ نہ بھیجنے کا فیصلہ کیا ہے۔

ویب سائٹ کے مطابق جنگ بندی کے معاہدے پر پیش رفت کی کوشش میں مصریوں اور قطریوں نے مزید مذاکرات کرنے کی پیشکش کی لیکن نیتن یاہو نے زور دے کر کہا کہ جب تک حماس اپنی پوزیشن تبدیل کرنے پر راضی نہیں ہوتی، اس وقت تک ایسا کرنے کا کوئی فائدہ نہیں۔

فلسطینی صدر محمود عباس نے بدھ کے روز حماس پر زور دیا تھا کہ وہ "جلد جنگ بندی"معاہدے کو مکمل کرے خاص طور پر رفح پر "حملے سے بچنے" کے لیے جنگ بندی کی جائے جہاں "ہزاروں ہلاکتیں ہوسکتی ہیں"۔

اس تناظر میں قبرصی وزیر خارجہ کے ساتھ ملاقات کے بعد فلسطینی وزیر خارجہ ریاض المالکی نے بدھ کے روز اسرائیلی وزیر اعظم پر الزام لگایا کہ وہ ایسے وقت میں صرف اپنی سیاسی بقا کی فکر کر رہے ہیں۔

غزہ میں 7 اکتوبر کو اس کے جنوب میں حماس کے جنگجوؤں کے حملے کے بعد سے شروع کی گئی فوجی مہم میں 28,000 سے زیادہ افراد ہلاک اور 68,000 زخمی ہوچکے ہیں۔

اس وقت رفح شہر پر اسرائیلی زمینی حملے کے خدشات بڑھ رہے ہیں، جہاں ایک ملین سے زائد فلسطینی غزہ کی پٹی کے جنوب میں اسرائیلی حملوں سے بچنے کے لیے ایک بڑے اور کھلے کیمپ کی شکل میں جمع ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں