فلسطین اسرائیل تنازع

اگرجنگ ابھی رکی تو غزہ کی تعمیر نو کے لیے 20 ارب ڈالر درکار ہوں گے: یو این

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

تجارت اور ترقی پر اقوام متحدہ کی کانفرنس (UNCTAD) کے ایک اہلکار نے کہا ہے کہ غزہ کی پٹی پراسرائیل کی طرف سے شروع کی گئی جنگ کے بعد بحالی اور تعمیر نو کے لیے ایک نئے "مارشل پلان" کی ضرورت ہوگی۔ ان کا کہنا تھا کہ اگر جنگ ابھی رک جاتی ہے تب بھی تعمیر نو کے لیے تقریباً 20 بلین ڈالر درکار ہوں گے۔

’یو این سی ٹی اے ڈی‘ کے ڈائریکٹر رچرڈ کوزول رائٹ نے جنیوا میں اقوام متحدہ کے اجلاس کے دوران بتایا کہ موجودہ نقصان 2014 میں 7 ہفتوں تک جاری رہنے والی جنگ میں غزہ میں پہنچنے والے نقصان کے 4 گنا کے برابر ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "ہم تقریباً 20 ارب ڈالر کے بارے میں بات کر رہے ہیں اگر (جنگ) اب رک جاتی ہے۔ اگر جنگ مزید جاری رہتی ہے تو تباہی کا تخمینہ بہت زیادہ ہوگا۔

رائٹ نے اس بات پر زور دیا کہ تعمیر نو کے لیے ایک نئے "مارشل پلان" کی ضرورت ہو گی جو دوسری جنگ عظیم کے بعد یورپ کی معیشت کی بحالی کے لیے امریکی منصوبے کی طرز پر ہوگا۔

یو این سی ٹی اے ڈی نے گذشتہ ماہ اپنی ایک رپورٹ میں تجویز پیش کی تھی کہ اگر فلسطینی پٹی میں لڑائی فوری طور پر روک دی جاتی ہے تو غزہ کی معیشت کو جنگ سے پہلے اپنے حجم کو دوبارہ حاصل کرنے میں یہ پوری صدی لگ جائے گی۔

تجارت اور ترقی کے بارے میں اقوام متحدہ کی کانفرنس نے اندازہ لگایا ہے کہ گذشتہ نومبر کے آخر تک 37,379 عمارتیں تباہ یا تباہ ہو چکی ہیں جو کہ غزہ کی پٹی کی کل عمارتوں کے 18 فیصد کے برابر ہے۔

فلسطینی ذرائع نے بتایا کہ رام اللہ میں فلسطینی حلقے سیاسی اور سکیورٹی دونوں غزہ کی پٹی پر اسرائیلی جنگ کے خاتمے کے بعد آئے دن کے مسئلے سے نمٹنے کے طریقہ کار پر تبادلہ خیال کر رہے ہیں۔

فلسطینی عوام کی امداد کے شعبے میں کام کرنے والے رامی العزہ نے کہا کہ "نئے اعداد و شمار سے ظاہر ہوتا ہے کہ غزہ میں 50 فیصد عمارتیں تباہ یا ناقابل استعمال ہو چکی ہیں"۔انہوں نے خبردار کیا کہ "غزہ میں یہ (فوجی) کارروائیاں جتنی دیر تک جاری رہیں گی اتنا ہی حالات سنگین ہوں گے۔

سیٹلائٹ امیجز اور آفیشل ڈیٹا کا استعمال کرتے ہوئے اقوام متحدہ کی ایجنسی نے اندازہ لگایا کہ 2023 کی پہلی تین سہ ماہی میں غزہ کی معیشت میں 4.5 فیصد کمی آئی ہے۔

ایجنسی نے ایک بیان میں کہا کہ جنگ نے "نمایاں طور پر بگاڑ کی رفتار کو تیز کیا اور جی ڈی پی میں 24 فیصد سکڑاؤ اور پورے سال کے دوران فی کس جی ڈی پی میں 26.1 فیصد کمی کردی"۔

العزہ نے کہا کہ فی کس جی ڈی پی میں گذشتہ سال ریکارڈ کی گئی کمی محاصرے کی پوری مدت اور 6 سابقہ فوجی کارروائیوں کے دوران ہونے والی کمی کے برابر ہے۔

جب کہ غزہ میں 45 فیصد افرادی قوت 7 اکتوبر سے پہلے بے روزگاری کا شکار تھی۔ محصور پٹی میں دسمبر تک یہ شرح تقریباً 80 فیصد تک پہنچ گئی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں