’’یہ تحائف تقسیم کرنے کی بات کا وقت نہیں‘‘

فلسطینی ریاست کے قیام کے منصوبے پر نیتن یاھو کا تبصرہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کے دفتر کے ایک ترجمان نے واشنگٹن پوسٹ کی شائع کردہ رپورٹ پر تبصرہ کیا ہے۔ اس رپورٹ میں بتایا گیا تھا کہ امریکہ فلسطینی ریاست کے قیام کا منصوبہ پیش کر رہا ہے۔

اس حوالے سے نیتن یاھو نے کہا کہ’’یہ فلسطینیوں میں تحائف تقسیم کرنے کی بات کرنے کا صحیح وقت نہیں ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ 7 اکتوبر کے حملے کے بعد اسرائیل ابھی تک اسی حالت میں ہے۔

واضح رہے واشنگٹن پوسٹ نے اس سے قبل خبر دی تھی کہ مصر، اردن، سعودی عرب، امارات اور قطر سمیت بعض عرب ممالک کے ساتھ مل کر امریکہ خطے کے لیے جنگ کے بعد کا منصوبہ تیار کر رہا ہے۔ اس منصوبے میں فلسطینی ریاست کے قیام کے لیے ایک مخصوص ٹائم ٹیبل بھی رکھا جا رہا ہے۔

اس حوالے سے فلسطینی وزارت خارجہ نے کہا ہے کہ کوئی بھی سیاسی اقدام جو اقوام متحدہ کے مکمل رکن کے طور پر فلسطینی ریاست کے وجود سے شروع نہیں ہوتا ہے ناکام ہو جائے گا۔

یاد رہے 7 اکتوبر کو حماس نے اسرائیل پر اچانک غیر معمولی حملہ کردیا تھا۔ اس حملے میں 1160 اسرائیلی ہلاک ہوگئے تھے۔ حماس نے 260 افراد کو یرغمال بنا کر غزہ کی پٹی میں منتقل کر دیا تھا۔

اسی دن سے اسرائیل نے غزہ پر خوفناک بمباری شروع کردی تھی۔ 27 اکتوبر کو اسرائیلی فورسز نے غزہ میں زمینی کارروائی بھی شروع کردی تھی۔ 132 دنوں میں صہیونی فورسز نے غزہ کی پٹی میں 28663 فلسطینیوں کو قتل کر دیا ہے۔

اس دوران سات روز کے لیے عارضی جنگ بندی بھی ہوئی اور دونوں اطراف سے قیدیوں کو تبادلہ کیا گیا۔ اس جنگ بندی کے دوران خواتین اور بچوں پر مشتمل اسرائیل کے 105 یرغمالیوں کو رہا کیا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں