اردن کے ولی عہد کی اہلیہ شہزادی رجوہ کے والد انتقال کر گئے

مرحوم خالد بن مساعد 1953 میں پیدا ہوئے۔ شادی عزہ بنت نایف عبدالعزیز سے ہوئی، چار بچے سوگوار چھوڑے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اردن کے ولی عہد کی اہلیہ شہزادی رجوہ الحسین کے والد خالد بن مساعد بن سیف بن عبدالعزیز السیف اتوار کو انتقال کر گئے۔ اردن کے بادشاہ شاہ عبداللہ دوم کے حکم سے شاہی دیوان نے شاہی ہاشمی کورٹ میں مرحوم کے لیے تین دن کے سوگ کا اعلان کیا۔ 18 فروری اتوار سے سوگ کا آغاز کیا گیا۔ شاہی دیوان نے اس مصیبت پر شاہ عبداللہ دوم ابن الحسین، شاہی خاندان، متوفی کے خاندان اور السیف خاندان سے دلی تعزیت اور دلی ہمدردی کا اظہار کیا ہے۔

خالد بن مساعد کون تھے؟

مرحوم سعودی خالد بن مساعد بن سیف بن عبدالعزیز السیف 1953 میں پیدا ہوئے، ان کی شادی عزہ بنت نایف سے ہوئی۔ ان کے چار بچے فیصل، نایف، دانا اور شہزادی رجوہ ہیں۔ السیف خاندان کی ابتداء سبائی قبیلے سے ہوئی جو شاہ عبدالعزیز کے دور کے آغاز سے ہی نجد کے شہر سدیر میں العطار قصبے کے شیخ ہیں۔

سبیع قبیلہ ان سب سے بڑے قبیلوں میں شمار ہوتا ہے جو مملکت سعودی عرب کے کئی علاقوں میں آباد ہوئے۔ ان میں سے ایک گروہ العطار میں مقیم تھا۔ العطار کے شہزادے سیف خاندان سے تھے۔

رجوہ کے والد
رجوہ کے والد

شہزادی رجوہ کے والد نے بیروت کی امریکن یونیورسٹی سے سول انجینئرنگ کی ڈگری کے ساتھ گریجویشن کر رکھا تھا۔ انہوں نے السیف کنٹریکٹنگ انجینئرز کمپنی کی بنیاد رکھی جو اب مملکت سعودی عرب کی سب سے بڑی کنٹریکٹنگ کمپنیوں میں سے ایک ہے۔ اس کے علاوہ بھی ان کی کئی کمپنیاں مختلف مختلف شعبوں میں کام کر رہی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں