مغربی کنارے میں آباد کاروں کے خلاف یورپی یونین سے متفقہ پابندیوں کی امید ہے: آئرلینڈ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

آئر لینڈ کے وزیر خارجہ نے مغربی کنارے میں یہودی آباد کاروں کی بڑھی ہوئی پر تشدد کارروائیوں کے حوالے سے کہا ' ہمیں امید ہے کہ یورپی یونین متفقہ طور پر یہودی آباد کاروں کے خلاف پابندیاں لگائے گی۔

وزیر خارجہ مارٹن مغربی کنارے میں فلسطینی شہریوں کے خلاف یہودی آباد کاروں کی بحد سے بڑھی ہوئی ان کارروائیوں کے بارے میں کہا پوری دنیا صدمے میں ہے۔ کہ یہودی آباد کس طرح فلسطینیوں کو نشانہ بنا رہے ہیں۔

واجح رہے مغربی کنارے میں سات اکتوبر سے اب تک کم از کم 300 کے قریب فلسطینیوں کو قتل کیا گیا ہے۔ زیادہ تر واقعات میں یہودی آباد کار ملوث رہے ہیں۔ مغربی کنارے کی اس پر تشدد صورت حقل کے بارے میں اسرائیلی اتحادی امریکہ کوبھی تشویش ہے اور یورپی ملک بھی اس بارے میں اسرائیلی حکومت کو متوجہ کرتے رہتے ہیں۔

پچھلے دنوں امریکہ نے چار یہودی آباد کاروں کو ان کے فلسطینیوں پر پرتشدد حملوں کی وجہ سے پابندیوں کا نشانہ بنایا ہے۔ مغربی کنارے میں قائم یہودی بستیوں میں مجموعی طور پر تقریباً 490000 یہودی آباد کار بسائے گئے ہیں۔

آئر لینڈ کے وزیر خارجہ نے کہا ' یہودی آباد کاروں کی تشدد پر مبنی کارروائیوں کے خلاف ہمیں افسوس ہے کہ ابھی تک یورپی برادری میں اتحاد و اتفاق پیدا نہیں ہو سکا ہے۔ اگرچہ خارجہ امور کونسل میں اس معاملے پر بات رکھی گئی ہے۔ انہوں نے توقع ظاہر کی ہے کہ یورپی یونین کے اگلے وزرائے خارجہ اجلاس میں غزہ کے لوگوں کے بارے میں بات ہوگی جو کہ عملاً اس وقت جہنم ارضی میں رہ ے ہیں۔۔

یاد رہے غزہ میں سات اکتوبر سے اب تک 29000 فلسطینی ،اسرائیلی فوج نے قتل کر دیے ہیں۔ جن میں اکثریت فلسطینی بچوں اور عورتوں کی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں