صدام حسین 2024 میں زندہ ہیں، ویڈیو نے حیران کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سوشل میڈیا کی دنیا میں کچھ بھی آجائے وہ حقیقت لگنے لگتا ہے۔ عجیب و غریب واقعات سوشل میڈیا پر پھیلتے رہتے ہیں جن کو درجنوں لائکس اور شیئرز ملتے ہیں۔

کیا صدام اپنی موت کے 20 سال بعد زندہ ہیں!

سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو میں جو پچھلے چند گھنٹوں کے دوران جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی ہے، مرحوم عراقی صدر صدام حسین کو دکھایا گیا ہے۔

صدر ایک انٹرویو میں نمودار ہوئے ، جب کہ پوسٹ کرنے والے نے دعویٰ کیا کہ اسے 2024 میں ریکارڈ کیا گیا ، جس کا مطلب ہے کہ صدر اب بھی زندہ ہیں۔ صارف نے لکھا کہ "یہ ثبوت ہے کہ صدام حسین 2024 میں زندہ ہیں... وہ آپ کو ایک بڑا سرپرائز دیں گے۔"

اس ویڈیو میں صدام کی آواز اور لہجہ ان کی حقیقی آواز اور لہجے سے مختلف لگ رہا ہے۔

ویڈیو پر تبصرہ کرنے والوں میں سے کچھ کا خیال تھا کہ یہ سچ ہے، اور یہ کہ مرحوم صدر ابھی بھی موجود ہیں اور نظروں سے پوشیدہ ہیں ، جبکہ بعض کا خیال ہے کہ یہ جھوٹا اور نقلی ویڈیو تھا۔

کیونکہ ان کی موت 20 سال سے زیادہ عرصہ قبل ہو چکی ہے۔

درحقیقت یہ ویڈیو جھوٹی ہے اور آڈیو تکنیک کا استعمال کرتے ہوئے اس میں ترمیم کی گئی ہے جبکہ صدام کا اصل انٹرویو 2003 میں کیا گیا تھا۔

نقلی ویڈیو سے (اے ایف پی)
نقلی ویڈیو سے (اے ایف پی)

یہ صدام حسین کے 4 فروری 2003 کو کیے گئے ایک پرانے انٹرویو سے اقتباس ہے جو برطانوی چینل 4 پر نشر ہوا تھا۔

اصل انٹرویو

اصل انٹرویو میں صدر کی آواز نقلی انٹرویو سے مختلف لگتی ہے۔

قابل ذکر ہے کہ صدام حسین نے اصل انٹرویو میں بڑے پیمانے پر تباہی پھیلانے والے ہتھیاروں اور القاعدہ کے بارے میں بات کی تھی۔ سوشل میڈیا پر وائرل ویڈیو میں آواز بدل کے تاثر دیا گیا ہے کہ صدام حسین اس بارے میں بات کر رہے تھے کہ وہ ابھی تک زندہ ہیں اور انہیں پھانسی نہیں دی گئی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں