غزہ میں بہت زیادہ لوگ مار دیے گئے اب جنگ بند ہونی چاہیے: برطانوی شہزادہ ولیم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

برطانیہ کے شہزادہ ولیم نے بھی کہہ دیا ہے کہ غزہ میں بہت لوگ مار دیے گئے ہیں کہ اب جنگ بند کر دینی چاہیے۔ شہزادہ ولیم نے یہ بات بحرین کے دورے کے موقع پر کہی ہے۔ مستقبل کے شاہ برطانیہ شہزادہ ولیم کا یہ تبصرہ ایسے موقع پر سامنے آیا ہے جب برطانیہ نے سلامتی کونسل میں جنگ بندی کے حق میں قرار داد کے لیے اپنا ووٹ ہی نہیں ڈالا۔

برطانیہ کا شاہی خاندان بھی عام طور پر اس طرح کے سیاسی ایشوز پر بات نہیں کرتا ہے۔ اس لیے شہزادہ ولیم کے یہ ریمارکس ایک معمول کا واقعہ نہیں قرار دیا جارہا ہے۔ اگرچہ سب جانتے ہیں کہ شاہ خاندان کی برطانیہ میں حیثیت محض رسمی مانی جاتی ہے۔

یہ سب اپنی جگہ اہم ہے کہ انہوں نے بھی یہ بات ایسے وقت پر کہی جب ساڑھے چار ماہ سے جنگ جاری ہے۔ 29 ہزار فلسطینیوں کی ہلاکت کے علاوہ پورے غزہ کی مکمل تباہی ہو چکی ہے اور غزہ کی تقریبا ساری آبادی بے گھر ہو چکی ہے۔

شہزادہ ولیم نے کہا ' حماس کے سات اکتوبر کے حملے کے بعد مجھے گہری تشویش ہے کہ غزہ میں لڑائی میں خوفناک حد تک انسانی جانوں کی قیمت لی جارہی ہے۔ کیونکہ بہت زیادہ ہلاکتیں ہو چکی ہیں۔'

41 سالہ شہزادہ ولیم نے اس بارے میں اپنی حکومت کے عمل کے برعکس بات کی ہے۔ اور انسانی مصائب کو محسوس کرنے کا اظہار کیا ہے۔ دوسری جانب ان کے ریمارکس کے سامنے آنے کے ساتھ ہی یہ بھی کہا ہے کہ 'شہزادہ ولیم عالمی سطح پر یہود مخالفت میں اضافے کو بھی اپنی توجہ کا مرکز بنائیں گے۔'

شہزادہ ولیم نے مزید کہا ' میں بھی دوسرے بہت سارے لوگوں کی طرح اب اس جنگ کا خاتمہ چاہتا ہوں، جس قدر جلد ممکن ہو جنگ ختم ہونی چاہیے۔ اسی طرح غزہ میں انسانی بنیادوں پر امداد کی ترسیل میں بھی اضافہ ہونا چاہیے اور یرغمالی کو رہا کیا جانا چاہیے۔'

برطانوی شہزادہ ولیم شاہی خاندان کے فرد ہیں جنہوں نے 2018 میں اسرائیل اور مقبوضہ فلسطینی علاقوں کا دورہ کیا تھا۔ یہ شاہی خاندان کے رکن کے طور پر ان کا سرکاری دورہ تھا۔ اب اگلے ہفتے وہ ایک یہودی عبادت گاہ میں ان یہودی نوجوانوں سے ملیں گے جو عالمی سطح پر یہود مخالف نفرت کا خاتمہ کرنے کے لیے کوشاں ہیں۔

سات اکتوبر کو جب حماس نے اسرائیل پر حملہ کیا تو شہزادہ ولیم کے والد نے بطور شاہ چارلس اس حملے کو وحشیانہ حملہ قرار دیاتھا۔ تاہم بعد ازاں وہ خاموش رہے ہیں۔ اب 29 ہزار سے زائد فلسطینیوں کی ہلاکت کے بعد پہلی بار شہزادہ ولیم نے بات کی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں